ریلوے کی ری سٹرکچرنگ سے ریونیو میں 9 ارب روپے اضافہ ہوگا‘ غلام احمد بلور

ریلوے کی ری سٹرکچرنگ سے ریونیو میں 9 ارب روپے اضافہ ہوگا‘ غلام احمد بلور

اسلام آباد(آن لائن) سینیٹ کی قائمہ کمیٹی برائے ریلوے کو وزیر ریلوے غلام احمد بلور نے بتایا ہے کہ ریلوے کی تباہی کا ذمہ دار سابق سیکرٹری خزانہ ڈاکٹر وقار مسعود ہے ، وہ ریلوے کی تباہی نہ کرتے تو ہمارے منہ کالے نہ ہوتے ، وقار مسعود کے رویے پر کابینہ میں کئی بار صدائے احتجاج بلند کی مگر کسی نے نہ سنی جبکہ سیکرٹری ریلوے نے بتایا کہ نیٹو سپلائی کیلئے ہم نے کسی سے رابطہ نہیں کیا اور نہ ہی ہمارے پاس اضافی انجن ہیں ۔ سٹیٹ بینک کا ریلوے کے ذمہ چالیس ارب روپے کا اوور ڈرافٹ ہے جو آئندہ پندرہ سال تک بھی ہم ادا نہیں کرسکتے ۔ کمیٹی کا اجلاس چیئرمین مولانا عبدالغفور حیدری کی صدارت میں ہوا جس میں وزیر ریلوے غلام احمد بلور اور ریلوے کے اعلیٰ حکام کے علاوہ سینیٹر مولا بخش چانڈیو ، سینیٹر ایم حمزہ ، کامل علی آغا ، ملک نجم الحسن سمیت دیگر نے شرکت کی ۔ سیکرٹری ریلوے عارف عظیم نے کمیٹی کو بریفنگ دیتے ہوئے بتایا کہ ملک بھر میں ریلوے ٹریک کی کل لمبائی گیار ہزار 755 کلو میٹر ، کل اسٹیشنز 558، ریلوے انجنوں کی تعداد 494، مسافر کوچز 1804 ، مال بردار ویگنز 18ہزار 468 اور ملازمین کی کل تعداد 81ہزار 267 ہے ۔ انہوں نے مزید بتایا کہ ریلوے انجن کی اوسط عمر 33سال اور 55فیصد ریلوے ٹریک زائد المعیاد ہوچکا ہے ۔ 86فیصد ریلوے پل 100سال پرانے ہیں ۔ 2010-11ءمیں 120سے زائد ریلوے انجن ناکارہ ہوچکے ہیں اس وقت 133 انجن آپریشنل ہیں جن میں 83 انجن مسافر ٹرینوں اور 6 انجن مال بردار ٹرینوں کو چلانے کیلئے استعمال کئے جارہے ہیں ۔ مسافر ٹرینو ں سے حاصل ہونیوالا ریونیو 10ارب 32 کروڑ ہے جو کہ 2011ءمیں 11ارب 28کروڑ تھا ۔ ان اقدامات سے ریلوے کا ریونیو 14 ارب سے بڑھ کر 23 ارب روپے تک ہوجائے گا 96 انجنوں کی مرمت کیلئے رواں مالی سال کے دوران 6ارب 10 کروڑ مختص کئے گئے ہیں جبکہ پلاننگ کمیشن تین ارب کی لاگت سے تین سکیموں کی منظوری دیدی ہے ۔ 27 انجنوں کی مرمت کیلئے ٹینڈرز طلب کرلیے ہیں اور 150 نئے انجنوں کی خریداری کیلئے بھی ٹینڈرز جاری کردیا گیا ہے رواں مالی سال کے دوران پچاس انجن خریدے جائیں گے انہوں نے کہا کہ حکومت نے ریلوے کیلئے ماہانہ حد ایک ارب روپے سے بڑھا کر دو ارب روپے کردی ہے ۔ بھارت نے موٹروے نہیں بنائی بلکہ ریلوے پر توجہ دے جس کی وجہ سے آج ریلوے ترقی کرچکا ہے ہم نے اپنی ریلوے کا بیڑہ غرق کردیا قوم کے اربوں روپے این آئی سی ایل جیسے اداروں نے ڈبو دیئے ہیں ۔

مزید : صفحہ آخر