ملک ریاض سے مالی فوائد لینے پر صحافیوں نے تحقیقات کیلئے آئینی درخواست دائر کر دی

ملک ریاض سے مالی فوائد لینے پر صحافیوں نے تحقیقات کیلئے آئینی درخواست دائر ...

اسلام آباد(آن لائن)صحافیوں پر ملک ریاض سے مالی فوائد لینے کا الزام ، دو سنیئر صحافیوںنے تحقیقات کے لئے آئینی درخواست دائر کر دی ۔ دائر کی گئی درخواست میں وفاق،پیمرا،پی ٹی اے،بحریہ ٹاﺅن، ملک ریاض،ایف بی آر، ایس ای سی پی،اور ایف آئی اے کو فریق بنایا گیا ہے، درخواست میں کہا گیا ہے کہ سپر یم کورٹ میں ملک ریاض اور ارسلان افتخار کیس کے دوران صحافیوں او میڈیا کے کنڈکٹ اور ایتھک سے متعلق بھی باتیں ہوئیں ، جس کے بعد ایس ایم ایس اور سوشل میڈیا پر صحافیوں کی کردار کشی مہم شروع کر دی گئی، یہ پروپیگنڈہ بھی کیا گیا کہ صحافی ملک ریاض اور بحریہ ٹاﺅن کے پے رول پر ہیںاور ایسے صحافیوں کی فہرست بھی جاری کی گئی تاکہ ان کو بدنام کیا جاسکے،درخواست گزاروں کے مطابق اطلاعات تک رسائی آئین کے مطابق ہر شہری کا حق ہے اور اس کے لئے آزاد اور غیر جانبدار میڈیا بہت ضروری ہے، درخواست گزاروں نے کہا ہے کہ پیمر اکاکو ڈ آف کنڈکٹ میڈیا اور کیبل آپریٹرز کو چلانے کے لئے ناکافی ہے، درخواست میں عدالت سے استدعا کی گئی ہے کہ عدالت بذات خود اس معاملے کی انکوائری کر ے یا متبادل کے طور پر ایک کمیشن مقرر کرے جو اس معاملے کی تحقیقات کر ے، عدالت سے یہ بھی استدعا کی گئی ہے کہ بحریہ ٹاﺅن کے سربراہ ملک ریاض کو ہدایت کی جائے کہ ان افراد، صحافیوں، فوجی حکام اور بیوروکریٹس سے متعلق ثبوت کے ہمراہ عدالت میں پیش ہوں جنہوںنے براہ راست یا بالواسطہ بحریہ ٹاﺅن یا ملک ریاض سے فوائد حاصل کرنے کی کوشش کی، عدالت ایف بی آر کو حکم دے کہ وہ تمام میڈیا سے وابسطہ افراد کے اثاثوں اور آمدن کی تفصیلات پیش کرے،درخواست گزار کا کہنا ہے کہ اینٹی کر پشن ڈیپارٹمنٹ پنجاب میں 640 ملین روپے کے سکینڈل دبائے جانے کی تحقیقات غیر جانبداری سے کی جائے۔

مزید : صفحہ آخر