سیالکوٹ :توی پر بننے والے پل کی تعمیر درست قراردینے پر انجینئر وں کیخلاف مقدمہ خارج ہونیکا امکان

سیالکوٹ :توی پر بننے والے پل کی تعمیر درست قراردینے پر انجینئر وں کیخلاف ...

لاہور (شہباز اکمل جندران) سیالکوٹ میں دریائے توی پر تعمیر ہونے والے پل کی تعمیر کو ڈائریکٹر برجز کی جانب سے درست قرار دیئے جانے کے بعد ہائی ویز ڈیپارٹمنٹ کے انجینئروں کیخلاف درج ہونے والا مقدمہ خارج ہونے کا امکان پیدا ہوگیا ہے۔ معلوم ہوا ہے کہ محکمہ مواصلات وتعمیرات نے 9فروری 2005کو سیالکوٹ میں توی کے مقام پر 18کروڑ روپے کی لاگت سے پل کی تعمیر شروع کی ، لیکن بروقت تعمیر نہ ہونے پر لاگت 18سے 30کروڑ تک جا پہنچی ، اسی دوران محکمہ مواصلات وتعمیرات کو شکایا ت موصول ہوئیں، کہ ایکسیئن ھائی ویز خالد حسین ہمدانی ، ایکسیئن ملک مہر محمد، ایس ڈی او سید نواز ش علی شاہ، سب انجینئر مرزا محمد یونس اور ٹھیکیدار محمد طاہر وغیر ہ نے پل کی تعمیر میں ناقص مٹیریل استعمال کرنے کے ساتھ ساتھ متذکرہ بالا انجینئروں نے ٹھیکیدار کو غیر قانونی طورپر ایڈوانس رقوم بھی دی ہیں، نیز ٹھیکیدار کے کام ادھورا چھوڑنے کی وجہ سے منصوبے کی لاگت میں اضافہ بھی ہوا، اس پر محکمہ مواصلات و تعمیرات نے انکوائری کی تو الزامات سچائی پر منبی نکلے ، جس پر سیکرٹری مواصلات تعمیرات نے بے ضابطگیوں میں ملوث ان انجینئروں کو چار چار سال تک سروس کی ضبطگی کی سزا سنائی ، جس کے جواب میں ان انجینئروں نے پنجاب سروس ٹربیونل سے رجوع کیااور پی ایس ٹی نے انجینئروں کو بے گنا ہ قرار دیتے ہوئے فیصلہ ان کے حق میں دیدیا، جس پر محکمے نے پی ایس ٹی کے فیصلے کے خلاف سپریم کورٹ سے رجوع کرلیا، اسی دوران وزیر اعلیٰ پنجاب نے سیالکوٹ میں توی برج کا معائنہ کیا اور پل کی ناقص تعمیر پر سخت ناراضگی کا اظہا ر کرتے ہوئے،متذکرہ بالا تمام انجینئروں کے خلاف اینٹی کرپشن میں مقدمہ درج کرنے کا حکم دیا جس پر اینٹی کرپشن سیالکوٹ نے پاکستان پینل کوڈ کی دفعات 420، 409 کے تحت دھوکہ دہی کرنے اور کرپشن کی روک تھام کے قانون 1947ءکے سیکشن 5(2)کے تحت مقدمہ درج کرلیا،اور اس کے ساتھ ہی ڈائریکٹربرجز کو حکم دیا کہ وہ پل کا تفصیلی معائنہ کریں ، جس پر ڈائریکٹر برجز سی اینڈ ڈبلیو پنجاب نے پل کو معائینہ کیا اور پل کی تعمیر و حالت کو درست قرار دیتے ہوئے رپورٹ کی کہ معمولی اوربے ضرر نقائص کے سوا پل ٹھیک ہے، اور گزشتہ تین برسوں سے ٹریفک کے لیئے استعمال ہورہا ہے وزیر اعلیٰ پنجاب کے حکم سے متصادم ڈائریکٹر برجز کی اس رپورٹ کے بعد انجینئروں کے خلاف درج ہونے والا مقدمہ خارج ہونے کا قوی امکان پیدا ہوگیا ہے۔

مزید : صفحہ آخر