سعودی عرب‘ نئے شعبوں میں خواتین کیلئے ملازمت کا اعلان

سعودی عرب‘ نئے شعبوں میں خواتین کیلئے ملازمت کا اعلان

ریاض (آئی این پی ) سعودی عرب کی وزارت محنت و افرادی قوت نے ملک بھر میں متعدد نئے شعبوں میں خواتین کے لیے ملازمت کے مواقع پیدا کرنے کا اعلان کیا ہے، خواتین اسلامی شریعت کے دائرے کی پابندی کرتے ہوئے فیملی پارک، جنرل سیلز مارکیٹوں اور ریستورانوں میں بھی کام کر سکیں گی۔ جمعرات کو سعودی وزارت محنت کی جانب سے جاری ایک بیان میں کہا گیا ہے کہ حکومت نے ماضی قریب میں خواتین کے روزگار کی فراہمی کے اعلان پر عمل درآمد کرتے ہوئے کچھ مزید اقدامات بھی کیے ہیں۔ اب خواتین کو کئی نئے شعبوں میں بھی ملازمت کے حصول کا موقع فراہم ہو سکے گا۔بیان میں کہا گیا ہے کہ حکومت نے مرحلہ وار خواتین کے ذاتی کاروبار اور بڑے بازاروں میں زنانہ مارکیٹ کا تصور اجاگر کیا ہے۔ اس سلسلے میں جدہ اور ریاض سمیت کئی دوسرے شہروں میں خواتین نے صنف نازک کے استعمال کے ملبوسات اور بعض دیگر اشیا سے کام کا آغاز کیا تھا۔ خواتین کو اپنی دکانوں پر صرف عام استعمال کے کپڑے رکھنے کی اجازت دی گئی تھی۔دوسرے مرحلے میں ملبوسات کے ساتھ میک اپ کا سامان رکھنے کی بھی اجازت دے دی ہے۔ اب تیسرے مرحلے میں خواتین اپنی دکانوں پر دلہا اور دلہن کے عروسی ملبوسات بھی رکھ سکیں گی تاہم خریداری کے لیے ان دکانوں پر صرف خواتین گاہکوں کو جانے کی اجازت ہو گی۔بیان میں کہا گیا ہے کہ وزارت محنت کے فیصلے کے دوسرے جزو میں خواتین کو مختلف نئے شعبوں میں ملازمتیں فراہم کرنے کا اعلان کیا گیا ہے۔ اب ملک بھر میں مختلف شعبوں میں تعلیم یافتہ اور تجربہ کار خواتین کو ان کے پیشے کے مطابق ملازمتیں دی جائیں گی۔ اس ضمن میں نئے اعلان کے مطابق خواتین ہول سیل ریٹیل شاپس پربھی کام کر سکیں گی۔ نیز انہیں فیملی کے لیے بنائے گئے مخصوص پارکوں کی دیکھ بھال اور فیملی ریستورانوں میں روزگار فراہم کیا جائے گا۔ سعودی وزارت محنت کی جانب سے جاری بیان میں کہا گیا ہے کہ خواتین کے لیے مخصوص مارکیٹوں میں نماز، آرام اور طعام و قیام کا مناسب بندو بست کیا جا رہا ہے۔ اس امر پر سختی سے نظر رکھی جائے گی کہ کوئی مرد، مینا بازاروں میں گھوم پھر نہ سکے۔ تاہم خاندان کی شکل میں آنے والی خواتین نابالغ بچوں کو ہمراہ رکھ سکتی ہیں۔وزارت محنت کی جانب سے جاری بیان میں کہا گیا ہے کہ خواتین کی ملازمت اور کاروبار کے لیے پہلے سے وضع کردہ شرائط میں کسی قسم کی تبدیلی نہیں کی گئی ہے۔ بیان میں بتایا گیا ہے کہ گذشتہ دس ماہ کے دوران حکومت نے ملک بھر میں خواتین کے لیے 50 ہزار ملازمیں تخلیق کیں جو گذشتہ پانچ سالوں کے دوران اتنے قلیل عرصے کی نسبت انیس گنا زیادہ ہے۔

مزید : عالمی منظر

لائیو ٹی وی نشریات دیکھنے کے لیے ویب سائٹ پر ”لائیو ٹی وی “ کے آپشن یا یہاں کلک کریں۔


loading...