چارسدہ ،باچا خان یونیورسٹی کے کنٹریکٹ ملازمین کا مظاہرہ

چارسدہ ،باچا خان یونیورسٹی کے کنٹریکٹ ملازمین کا مظاہرہ

چارسدہ(بیورو رپورٹ) با چا خان یونیوسٹی میں اندھیر نگری چوپٹ راج کے خلاف کنٹریکٹ ملازمین کا وائس چانسلر کے خلاف احتجاجی مظاہرہ۔وائس چانسلر پر بھرتیوں میں بے قاعدگیوں کے الزامات ۔ وائس چانسلر نے اپنے بیٹے اور قریبی رشتہ دار کو گریڈ 17 میں تعینات کرکیمیرٹ کی دھجیاں اڑا دی ہے ۔ من پسند کنٹریکٹ ملازمین کو مستقل کیا گیا جس کی وجہ سے سینکڑوں کنٹریکٹ ملازمین کا مستقبل غیر یقینی ہے ۔ تفصیلات کے مطابق باچا خان یونیورسٹی کے کنٹریکٹ ملازمین نے وائس چانسلر کی جانب سے اپنے بیٹے اور رشتہ دار کو گریڈ 17میں تعینات کرنے اور من پسند افراد کو مستقل کرنے کے خلاف وی سی آفس کے سامنے احتجاجی مظاہرہ کیا۔مظاہرین نے وی سی سے غیر قانونی تعیناتی کو فوری طور پر ختم کرنے اور کنٹریکٹ ملازمین کو مستقل کرنے کا مطالبہ کیا۔ مظاہرے سے خطاب کر تے ہوئے کنٹریکٹ ملازمین کے صدر میرا حمد شاہ نے کہا کہ باچا خان یونیورسٹی میں اندھیر نگری چوپٹ راج ہے ۔ وی سی با چا خان یونیوسٹی نے یونیوسٹی میں تعیناتی کے دوران میرٹ کی دھجیاں اڑاد ی اور یونیوسٹی کے کنٹریکٹ ملازمین میں سے صرف من پسند افراد کو ہی مستقل کیا گیا ہے ۔انہوں نے کہا کہ کہ وی سی نے پہلے اپنے بیٹے کو گریڈ 17میں تعینات کیا جس کے چند دن بعد اپنے قریبی رشتہ دارکو گریڈ 17میں تعینات کیا جبکہ اس دوران وی سی کی جانب سے یونیورسٹی کے 300کنٹریکٹ ملازمین میں سے وقفے وقفے سے اپنے من پسند افراد کو مستقل کیا گیا ۔انہوں نے یونیوسٹی انتظامیہ کو تین دن کا الٹی میٹم دیتے ہوئے فوری طور پر غیر قانونی تعیناتی کو فوری طور پر ختم کرنے اور میرٹ کی بنیاد پر کنٹریکٹ ملازمین کی مستقلی کا مطالبہ کیا ۔

مزید : راولپنڈی صفحہ آخر


loading...