بھارت کا فسادا ت کا نیا منصوبہ، 30ہزار ہندو تو ادہشتگرد مقبوضہ کشمیر پہنچ گئے

  بھارت کا فسادا ت کا نیا منصوبہ، 30ہزار ہندو تو ادہشتگرد مقبوضہ کشمیر پہنچ ...

  

سرینگر (این این آئی) مقبوضہ کشمیر میں نسل کشی کے بھارتی منصوبے کے تحت ہندوتوا دہشت گردوں کی ایک تربیت یافتہ فورس کے ذریعے بڑے پیمانے پر مسلم کش منصوبے پر کام جاری ہے۔ ذرائع نے کشمیرمیڈیاسروس کوبتایا کہ گزشتہ دو ہفتوں کے دوران 30ہزار سے زائد ہندوتوا تربیت یافتہ دہشت گرد کشمیر پہنچے ہیں جبکہ مزید دہشت گرد سڑک اور ہوا ئی راستے سے کشمیرآرہے ہیں۔ یہ سب کچھ اس وقت ہو رہا ہے جب بھارتی فوج کی طرف سے گزشتہ سال 05 اگست کے بعدسے کشمیری مسلمانوں کے خلاف کئے گئے کریک ڈاؤن کو ایک سال مکمل ہو رہا ہے اور کورونا وائرس کی آڑمیں اس میں مزید سختی آئی ہے۔بھارتی فوج اور نیم فوجی دستوں نے سیکڑوں قصبوں اور دیہاتوں کو سیل کردیا ہے اور لاکھوں کشمیریوں کو گھروں کے اندر محصورکردیا ہے اوروسیع پیمانے پران ظالمانہ اقدامات کو وبا سے نمٹنے کے لئے احتیاطی تدابیر قرار دیا جارہا ہے۔ذرائع نے بتایا کہ عوامی نقل وحرکت کے خلاف اس سخت کریک ڈاؤن کے دوران بھارتی فوج روزانہ کی بنیاد پرہندوتوا سے وابستہ ہزاروں دہشت گردوں کو بسوں اور ہوائی جہازوں کے ذریعے کشمیر منتقل کررہی ہے۔ یہ لوگ آر ایس ایس، وی ایچ پی، شیو سینا، ہندو واہنی اور پنن کشمیر جیسے مختلف ہندو دہشتگرد گروہوں سے وابستہ ہیں اورانہیں تلواروں اور آتشیں اسلحہ کے استعمال کے ساتھ ساتھ آتش زنی اور لنچنگ کی تربیت دی گئی ہے جس کا مظاہرہ رواں سال فروری میں نئی دہلی میں مسلم کش فسادات کے دوران کیاگیا تھا۔ کشمیریوں کو خدشہ ہے کہ بھارت کی ہندوتوا سے متاثر ہ حکومت مقامی مسلم آبادی کے خلاف فسادات کی منصوبہ بندی کر رہی ہے تاکہ بڑے پیمانے پرہندو آبادی کو کشمیر میں داخلے کے لیے راہ ہموار کی جائے۔ اس سے مسلم اکثریت کو اقلیت میں تبدیل کرنے کا دیرینہ بھارتی منصوبہ پورا ہوجائے گا۔ایک مقامی پولیس افسر کے مطابق ہندوتوا دہشت گردوں کے بڑے پیمانے پر داخلے کی براہ راست نگرانی بھارتی وزیر داخلہ امیت شاہ اور وزیر دفاع راج ناتھ سنگھ کررہے ہیں۔ پولیس عہدیدار کے مطابق خوفناک بات یہ ہے کہ ان ہندوتوا دہشتگردوں کو بھارتی فوج کی چھاؤنیوں اور کیمپوں کے اندر بسایا جارہا ہے جوپوری وادی کشمیر میں پھیلے ہوئے ہیں۔ایک صحافی نے بھی ہندوتوا دہشت گردوں کے بڑے پیمانے پر داخلے کی خبروں کی تصدیق کی ہے جس سے مقامی مسلمانوں میں خوف و ہراس پھیل گیا ہے۔

بھارتی منصوبہ

مزید :

صفحہ اول -