اپوزیشن جماعتوں کا ایک پلیٹ فارم متحد ہونا ناگزیر ہے: سکندر حیا ت شیر پاؤ

اپوزیشن جماعتوں کا ایک پلیٹ فارم متحد ہونا ناگزیر ہے: سکندر حیا ت شیر پاؤ

  

صوابی(بیورو رپورٹ)قومی وطن پارٹی کے صوبائی چیر مین و سابق صوبائی سینئر وزیر سکندر حیات خان شیر پاؤ نے صوبائی حقوق، این ایف سی ایوارڈ، آٹھارہویں تر میم اور ملک اور عوام کے مفاد کے لئے مشترکہ تحریک چلانے اور تمام ایشوز پر ایک واضح موقف اختیار کرنے کے لئے تمام اپوزیشن جماعتوں کو ایک پلیٹ فارم پر متحد ہونے کی ضرورت پر زور دیتے ہوئے کہا ہے کہ اب وقت آگیا ہے کہ اپوزیشن جماعتیں موجودہ حالات کے تناظر میں فعال اور مثبت کر دار ادا کر کے عوام کی صحیح طور پر نمائندگی کر سکے۔ ان خیالات کااظہار انہوں نے ایک روزہ دورہ صوابی کے موقع پر ضلعی دفتر میں کارکنوں سے خطاب، ٹوپی میں پی پی پی کے سابق ضلعی صدر حاجی منفعت خان ان کے بھائی لیاقت خان اور موضع اسماعیلہ میں سابق ایم پی اے مقدمل خان کی وفات پر فاتحہ خوانی کے موقع پر کیا۔ انہوں نے کہا کہ پی ٹی آئی کی حکومت صوبائی اسمبلی سے اگست 2021تک بلدیاتی انتخابات موخر کرنے کے متعلق جو بل پاس کی ہے قومی وطن پارٹی نہ اس کی مذمت کر تی ہے بلکہ اس کے خلاف قانونی کارروائی بھی کرئے گی۔ انہوں نے کہا کہ ایمپوز ڈیمو کریسی اور ایمپوز اسمبلی کا وجود میں آنے پر اپوزیشن کو مزید مضبوط اور فعال کر دار ادا کرنا ہو گا۔ پی ٹی آئی حکومت جیتنے کی پوزیشن میں نہیں ہے اس لئے بلدیاتی الیکشن سے راہ فرار اختیار کر رہی ہے بلدیاتی انتخابات میں تاخیر صوبے کے عوام کے ساتھ زیادتی ہے انہوں نے کہا کہ حکومت کا بجٹ میں سرکاری ملازمین کی تنخواہوں اور پنشن میں اضافہ نہ کرنا انتہائی ظلم و زیادتی ہے اسے ہم مسترد کر تے ہیں حکومت کہہ رہی تھی کہ عوام کو نقصان ہونے پر لاک ڈاؤن ختم کی جارہی ہے اس سے زیادہ دیہاڑی دار اور تنخواہ دار طبقہ متاثر ہوا تھا حکومت کا تنخواہوں اور پنشن میں اضافہ نہ کرنے سے یہ ثابت ہو گیا کہ تمام فیصلے سرماریہ دار طبقے کے لئے کی جارہی ہے انہوں نے کہا کہ پاکستان تحریک انصاف کی حکومت انصاف کے نعرے پر اقتدار میں آئی ہے جب کہ اس لحاظ سے پاکستان کی میڈیا نے پی ٹی آئی کو سپورٹ بھی کیا تھا۔ حکومت کو چاہئے تھا کہ وہ میڈیاپر مزید توجہ دیتی میڈیا کی گناہ یہ ہے کہ میڈیا حقیقت سامنے لا کر حکومت پہلے سے سبق حاصل کر تی ہے۔ لیکن پی ٹی آئی حکومت بجائے اس کے جنگ گروپ کے میر شکیل الرحمن کی گرفتاری، مختلف اینکرز کو ملازمتوں سے فارغ کرنے اور چینل پر پابندی لگانے کی شکل میں جو اقدامات کر رہی ہے ہم اس کی بھر پور مذمت کر تے ہیں۔ جمہوری نظام اور ملک کے لئے آزاد صحافت لازمی و ضروری ہے لیکن پی ٹی آئی حکومت میڈیا پر قدغن اور پابندیاں لگا رہی ہے جس کی ہم مخالفت کر تے رہیں گے۔ انہوں نے کہا کہ نیپرا کا مجوزہ پلان 2020-47خیبر پختونخوا کے ساتھ پی ٹی آئی کی حکومت کے ہوتے ہوئے انتہائی نا انصافی ہے نیپرا بجلی کے منصوبوں سے بجلی خرید کر نیشنل گرڈ میں شامل کرئے گی

مزید :

پشاورصفحہ آخر -