دنیا کی انجینئرنگ کی کل تجارت کھربوں ڈالر ہے ‘ چیئرمین پیاف

دنیا کی انجینئرنگ کی کل تجارت کھربوں ڈالر ہے ‘ چیئرمین پیاف

  

لاہور(کامرس رپورٹر)پیاف کے چیئرمین اور لاہور چیمبر کے سابق سینئر نائب صدر طاہر جاوید ملک نے کہا ہے کہ اگر حکومت انجینئرنگ اور آٹوموبیل سیکٹر کو ٹیکسٹائل سیکٹر کی طرح مراعاتی پیکج دے دے تو ان شعبوں کی برآمدات دگنی ہو سکتی ہیں جبکہ لاکھوں افراد کو روزگارمل سکتا ہے ۔انہوں نے مزید بتایا کہ اس وقت پاکستا ن کے انجینئرنگ اور آٹوموبیل سیکٹر کی کل برآمدات صرف 150ملین ڈالر ہیں جبکہ دنیا کی انجینئرنگ کی کل تجارت کھربوں ڈالر ہے جس میں پاکستان کا حصہ نہ ہونے کے برابر ہے اگر حکومت انجینئرنگ اور آٹو موبیل سیکٹر کے صنعت کاروں کی سفارشات پر عمل کرے تو ان شعبوں کی ایکسپورٹ میں بہت زیادہ اضافہ ہو سکتا ہے ۔گزشتہ روز انہوں نے خصوصی گفتگو کرتے ہوئے بتایا کہ بجٹ میں ٹریکٹر انڈسٹری پر عائد سیلز ٹیکس 16فیصد سے کم کر کے 10فیصد کرنے پر وفاقی وزیر خزانہ اسحاق ڈار مبارک باد کے مستحق ہیں جنہوں نے ٹریکٹر انڈسٹری اور اس وابستہ وینڈنگ انڈسٹری کو تباہی سے بچا لیا۔انہوں نے بتایا کہ یکم جولائی2014ءسے ٹریکٹر انڈسٹری پر 10فیصد سیلز ٹیکس نافذ ہو جائے گا اگر اس کا اطلاق پہلے کر دیا جاتا تو ٹریکٹر انڈسٹری کو اربوں روپے کا نقصان نہ پہنچتا اور فیکٹریاں بند نہ ہوتیں۔طاہر جاوید ملک نے ایک سوال کے جواب میں بتایا کہ وزیراعظم محمد نوازشریف اور وزیراعلی پنجاب محمد شہبازشریف نے ایک سال کے اندر ملکی معیشت مستحکم کرنے کیلئے قابل قدراقدامات کئے ہیںجن کی وجہ سے صنعتی و تجارتی سرگرمیوں میں اضافہ ہوا ہے ۔

بیرونی سرمایہ کاروں کا پاکستان پر اعتماد بڑھا ہے جس کا واضح ثبوت دو ارب ڈالر مالیت کے یورو بانڈز کی فروخت اور سٹاک مارکیٹ میں ہونے والی بیرونی سرمایہ کاری سے لگایا جا سکتا ہے ۔انہوں نے ایک سوال کے جواب میں بتایا کہ اگر خدانخواستہ موجودہ حکومت کو اپنی آئینی مدت پانچ سال پوری نہ کرنے دی گئی اور اسے غیر آئینی اور غیر جمہوری طریقے سے ہٹایا گیا تو پاکستان اور اسکی معیشت کو ناقابل تلافی نقصان پہنچ سکتا ہے ۔

مزید :

کامرس -