جنرل مینجر پی ٹی سی ایل2 گھنٹے عدالتی تحویل میں رہ کر رہا

جنرل مینجر پی ٹی سی ایل2 گھنٹے عدالتی تحویل میں رہ کر رہا

  

لاہور (نامہ نگار خصوصی ) لاہور ہائیکورٹ نے عدالتی حکم کے مطابق برطرف ملازمین کو بحال نہ کرنے پر پی ٹی سی ایل کے جنرل مینجر ایچ آر کلیم شروانی کو 2گھنٹے کیلئے عدالتی تحویل میں لے لیا، ہائیکورٹ کے فیصلے پر عملدرآمد کی رپورٹ جمع کرانے پر جان بخشی ہوئی ۔ جسٹس خالد محمود خان نے جمشید علی اور دیگر کی طرف سے دائر توہین عدالت کی درخواست پر سماعت کی، درخواست گزار کے وکیل نے بتایا کہ لاہور ہائیکورٹ نے پندرہ مختلف درخواستوں پر فیصلہ دیتے ہوئے دو ہزار دس میں برطرف کئے گئے پی ٹی سی ایل کے ملازمین کو بحال کر دیا تھا مگر محکمہ کے اعلیٰ افسران عدالتی حکم ماننے سے انکاری ہیں، انہوں نے بتایا کہ عدالتی حکم کے مطابق ملازمین کو جوائننگ نہیں دی جا رہی، عدالت میں موجود جنرل مینجر کلیم شیروانی نے بتایا کہ محکمے نے ہائیکورٹ کے فیصلے کیخلاف انٹراکورٹ اپیل دائر کر رکھی ہے، عدالت نے استفسار کیا کہ کیا محکمہ کے اپیل پر کوئی حکم امتناعی جاری ہوا ہے تاہم جنرل مینجر کوئی جواب نہ دے سکے جس پر ہائیکورٹ نے جنرل مینجر کو عدالتی تحویل میں لینے کا حکم دیتے ہوئے کہا کہ عدالتی احکامات کی خلاف ورزی کرنے والے افسران کیلئے بہترین جگہ کیمپ جیل ہے، جیسے ہی جنرل مینجر کو عدالتی تحویل میں لئے جانے کی اطلاع پی ٹی سی ایل ہیڈ آفس پہنچی تو محکمے کے عملہ برطرف درخواست گزاروں کی بحالی کا نوٹیفکیشن لیکر ہائیکورٹ پہنچ گیا، وقفے کے بعد دوبارہ سماعت ہوئی تو عدالت نے ملازمین کا بحالی کا نوٹیفکیشن دیکھتے ہوئے جنرل مینجر کلیم شیروانی کو رہا کرنے کی ہدایت کردی۔

 عدالتی تحویل

مزید :

صفحہ آخر -