برطانیہ میں فرقہ واریت پھیلانے پر جیل

برطانیہ میں فرقہ واریت پھیلانے پر جیل
برطانیہ میں فرقہ واریت پھیلانے پر جیل

  

لندن(نیوز ڈیسک) پاکستان میں رہنے والا ہر فرد فرقہ وارانہ فسادات کی خوفناک تباہی سے واقف ہے کیونکہ ہمارے ہاں ہزاروں جانیں ان فسادات کی نظر ہوچکی ہیں لیکن اب پہلی دفعہ یہ فسادات برطانیہ میں بھی شروع ہوگئے ہیں جہاں شیعہ فرقے کے کچھ اور لوگوں کو ایک غیر شیعہ فرقے کے لوگوں نے تشدد کا نشانہ بنا ڈالا۔حملہ آوروں کے خلاف عدالتی کارروائی کے بعد انہیں مجرم قرار دے کر جیل بھیج دیا گیاہے۔یہ واقعہ لندن شہر کی ایجویہ روڈ کے علاقہ میں پیش آیا جہاں شیعہ فرقہ کے لوگ اکثریت میںہیں۔ اس علاقہ میں انجم چوہدری نامی ایک مبلغ کی قیادت میں ایک مظاہرہ جاری تھا جس میں شام میں لڑنے والے جنگجوﺅں کے حق میں تقاریر کی جارہی تھیں اور لوگون کوشامی حکومت کے خدمت کرنے کی دعوت دی جارہی تھی اسی دور ان جارڈن ہورنا نامی20سالہ شخص نے شعیہ فرقے کے ایک فرد کو کافر قرار دے کر اس پر حملہ کردیا جس کے بعد نصف درجن کے قریب دیگر لوگ بھی تشدد میں شامل ہوگئے۔ اور دو شیعہ افراد کو گھونسوں اور لاٹھیوں کے وار کر کے شدید زخمی کردیا۔حملے کا شکار ہونے والے محمد الحریری اور مہند کا کہنا ہے کہ ان کی طرف سے کوئی اشتعالانگیزبات نہیں کی گئی تھی۔

مزید :

بین الاقوامی -