عراق میں بحران، عالمی منڈی میں تیل کی قیمتیں تیزی سے بڑھنے لگیں

عراق میں بحران، عالمی منڈی میں تیل کی قیمتیں تیزی سے بڑھنے لگیں
عراق میں بحران، عالمی منڈی میں تیل کی قیمتیں تیزی سے بڑھنے لگیں

  

بغداد(نیوزڈیسک) بدامنی اور قتل و غارت گردی نے مشرق وسطیٰ خصوصاً شام اور عراق کو اپنی لپیٹ میں لے رکھا ہے ۔عراق پر شدت پسند گروپ الدولة الاسلامی فی العراق و الشام (داعش) کے قبضے کے بڑھتے خطرے نے دنیا بھر میں تیل کی قیمتوں کو بلند ترین سطح پر پہنچا دیا ہے۔داعش اور عراقی حکومت کے درمیان جنگ اس وقت تیل پیدا کرنے والے عراقی علاقوں کو لپیٹ میں لے چکی ہے اور یہ خدشہ پیدا ہوگیا ہے کہ دنیا میں تیل پیدا کرنے والا دوسرا بڑا ملک جنگجوﺅں کے قبضے میں جاسکتا ہے۔ان خدشات کا نتیجہ یہ ہے کہ جون میں خام تیل کی قیمت 115 ڈالر فی بیرل تک پہنچ گئی ہے جوکہ اس ماہ کےلئے پچھلے آٹھ سال کی بلند ترین سطح ہے ۔ جبکہ پچھلے ماہ سے قیمتیں مسلسل 113 ڈالر فی بیرل سے اوپر رہی ہےںمغربی ممالک خصوصاً امریکہ میں یہ پریشانی بڑھتی جارہی ہے کہ عراق پر جنگجوﺅں کے قبضے کے بعد پٹرول کی قیمتوں میں بے پناہ اضافہ ہوجائے گا۔عراق میں تیزی سے بڑھتے ہوئے عدم استحکام کے نتیجے میں تیل کی بڑھتی ہوئی قیمتوں سے پاکستان جیسے ترقی پذیر ممالک زیادہ متاثر ہونگے جہاں عوام پہلے ہی غربت کی چکی ہیں پس رہے ہیں، ڈیزل اور پٹرول کی قیمتیں آسمان چھو رہی ہیں۔

مزید :

بزنس -