بچوں کو پڑھائی کے ساتھ ساتھ کھیلنے بھی دیں: سائنسی تحقیق

بچوں کو پڑھائی کے ساتھ ساتھ کھیلنے بھی دیں: سائنسی تحقیق
بچوں کو پڑھائی کے ساتھ ساتھ کھیلنے بھی دیں: سائنسی تحقیق

  

برمنگھم(نیوز ڈیسک) والدین عموماً بچوں پر زیادہ سے زیادہ پڑھائی کرنے اور کم سے کم کھیل کود کےلئے دباﺅ ڈالتے رہتے ہیں۔ لیکن ایک تازہ تحقیق نے ثابت کیا ہے کہ اگر آپ چاہتے ہیں کہ آپ کے بچے پڑھائیں اور بہترین کارکردگی کا مظاہرہ کریں تو انہیں گھر سے باہر کھیل کود کے مواقع فراہم کریں ،سیر سپاٹے اور غیر نصابی کتب پڑھنے کی بھی اجازت دیں۔ یونیورسٹی آف کولوراڈ و کے سائنسدانوں کی تحقیق نے واضح کیا ہے کہ بچوں کو ہر وقت پڑھائی کے لئے بٹھائے رکھنے یا اپنی نگرانی میں تربیتی سرگرمیوں میں مصروف رکھنے سے ان میں اپنے لئے کوئی منزل طے کرنے اور آزادانہ فیصلہ سازی کی صلاحتیں کم ہوجاتی ہیں۔

اس تحقیق میں چھ سال کی عمر کے 70بچوں کی روز مرہ سرگرمیوں کوریکارڈ کیا گیا اور دیکھا گیا کہ پابند سرگرمیوں اور آزاد سرگرمیوں کا بچوں کا کارکردگی پر کیا اثر پڑتا ہے پابند سرگرمیوں میں گھریلو کام جسمانی تربیت ، اور مذہبی سرگرمیاں شامل تھیں جبکہ آزاد سرگرمیوںمیں بچوں کا اکیلے یا دوسرے بچوں کے ساتھ کھیلنا ،میل جول، سیرو سیاحت اور غیر نصابی کتب کا مطالعہ شامل تھا۔نتائج سے معلوم ہوا کہ جن بچوں کو والدین زیادہ تر اپنی نگرانی میں کام کرواتے ہیں اور پابندی سرگرمیوں میں مشغول رکھتے ہیں۔ ان میں آزاد سرچ ، فیصلہ سازی اور تخلیقی صلاحیتوں کی کمی ہوجاتی ہے جبکہ آزاد سرگرمیوں میں شامل ہونے والے بچوں میں زیادہ خود اعتماد اور مسائل کو حل کرنے کی بہتر صلاحیت پائی گئی۔

مزید :

تعلیم و صحت -