بھارتی وزیر اعظم نریندرا مودی کے دورہ لکھنئو میں خلل ڈالنے کی منصوبہ بندی کا الزام ،ہندوستانی سیکیورٹی اداروں نے 24 طالب علموں کو گرفتار کر لیا

بھارتی وزیر اعظم نریندرا مودی کے دورہ لکھنئو میں خلل ڈالنے کی منصوبہ بندی کا ...
بھارتی وزیر اعظم نریندرا مودی کے دورہ لکھنئو میں خلل ڈالنے کی منصوبہ بندی کا الزام ،ہندوستانی سیکیورٹی اداروں نے 24 طالب علموں کو گرفتار کر لیا

  


لکھنئو(ڈیلی پاکستان آن لائن)بھارتی وزیر اعظم نریندرا مودی کے دورہ لکھنئو کے موقع پر ہندوستانی سیکیورٹی اداروں نے پوری ریاست میں ’’نیم کرفیو ‘‘ کی کیفیت پیدا کر دی ہے ،جگہ جگہ ناکوں اور چھاپوں کا سلسلہ جاری جبکہ نریندرا مودی کے  پروگرام میں خلل ڈالنے کی منصوبہ بندی کے الزام میں سیکیورٹی اداروں نے24 طالب علموں کو حراست میں لے کر نا معلوم مقام پر منتقل کر دیا ہے۔

بھارتی نجی ٹی وی چینل ’’انڈیا ٹی وی ‘‘ کے مطابق بھارتی وزیر اعظم نریندرا مودی کل 21 جون کو   2 روزہ دورے پر لکھنئو پہنچ رہے ہیں جہاں وہ ’’عالمی یوگا ڈے‘‘سی ڈی آر آئی  اور  دیگر تنظیموں کے پروگرامز میں شرکت کریں گے تاہم سیکیورٹی اداروں نے عالمی یوم یوگا کے پروگرام میں شرپسندی اور خلل کی منصوبہ بندی پر 24طالب علموں کو گرفتار کر کے نامعلوم مقام  پر منتقل کر دیا ہے جبکہ خفیہ اطلاعات پر  میٹروپولیٹن، حسن گنج اور آشیانہ کے علاقوں میں سیکیورٹی اداروں کے مسلسل چھاپے جاری ہیں ۔

  وزیر اعظم نریندر مودی کے دورہ لکھنؤ  کے پیش نظر شہر کے داخلی اور خارجی راستوں پر سیکیورٹی سخت کر دی ہے جبکہ دوسری طرف کہا جا رہا ہے کہ بھارتی پولیس نےلکھنئو میں  ان طالب علموں کو گرفتار کیا ہے جو  چیمپیئن ٹرافی میں بھارتی شکست پر ہندوستانی کھلاڑیوں کے خلاف سخت احتجاج کر رہے تھے تاہم ایک اور ذرائع کا کہنا ہے کہ ان گرفتاریوں کا کرکٹ میچ سے کوئی لینا دینا نہیں ہے ،کالج انتظامیہ نے سیکیورٹی اداروں کو 27 طلبا کی فہرست فراہم کی تھی جس پر کارروائی کرتے ہوئے فورسز نے 24 طالب علموں کو حراست میں لے لیا ہے ،ان گرفتار ہونے والوں میں سماج وادی طلبہ یونین کے علاوہ آئیسا سے وابستہ چند طالب علموں کےنام بھی شامل ہیں۔

مزید : بین الاقوامی


loading...