آصف زرداری کو شہید بی بی کا مشن جاری رکھنے کی پاداش میں انتقامی کاروائیوں کا نشانہ بنایا جا رہا ہے:بلاول بھٹو زرداری

آصف زرداری کو شہید بی بی کا مشن جاری رکھنے کی پاداش میں انتقامی کاروائیوں کا ...
 آصف زرداری کو شہید بی بی کا مشن جاری رکھنے کی پاداش میں انتقامی کاروائیوں کا نشانہ بنایا جا رہا ہے:بلاول بھٹو زرداری

  


اسلام آباد(ڈیلی پاکستان آن لائن)پاکستان پیپلز پارٹی کے  چیئرمین بلاول بھٹو زرداری نے کہا ہے کہ شہید محترمہ بینظیر بھٹو دھرتی کی عظیم بیٹی تھی،وہ اب پاکستان کی روشن و بینظیر پہچان ہیں،وہ آخری گھڑی تک عوام کے حقوق اور پاکستان کی سربلندی کے لیئے جدوجہد کرتی رہیں،شہید بی بی کا مشن پاکستان میں جمہوری نظام اور مساوات پر مبنی معاشرے کی تشکیل تھا،سابق صدرِ آصف زرداری کو شہید بی بی کا مشن جاری رکھنے کی پاداش میں انتقامی کاروائیوں کا نشانہ بنایا جا رہا ہے۔

شہید محترمہ بینظیر بھٹو کی سالگرہ کے موقع پرپی پی پی چیئرمین بلاول بھٹو زرداری کا  اپنے پیغام میں کہنا تھا کہ شہید بی بی کا مشن پاکستان میں جمہوری نظام اور مساوات پر مبنی معاشرے کی تشکیل تھا، وہ زندگی بھر عزم، حوصلے اور صبر کے ساتھ اپنے مشن پر کاربند رہیں۔ بلاول بھٹو زرداری نے کہا کہ شہید بی بی کا مشن پاکستان میں جمہوری نظام اور مساوات پر مبنی معاشرے کی تشکیل تھا، اُن کا مشن درحقیقت قائدِاعظم کے افکار کی روشنی میں شہید بھٹو کا مشن تھا،دو بار منتخب ہونے کے باوجود شہید بی بی کی عوامی حکومت کو چلنے نہیں دیا گیا، مشکلات کے باوجود انہوں نے اداروں کی مضبوطی اور آئین و قانون کی بالادستی کے لیئے اقدامات اٹھائے۔ بلاول بھٹو زرداری نے کہا کہ شہید بی بی نے وفاق اور صوبوں کے درمیان ہم آہنگی کو فروغ دیا، اُنہوں نے مزدوروں، خواتین اور اقلیتوں سمیت معاشرے کے پسماندہ طبقات کے فلاح و بھبود کو یقینی بنایا،پیپلز پارٹی شہید محترمہ بینظیر بھٹو کے مشن پر سختی سے کاربند ہے۔بلاول بھٹو زرداری کا کہنا تھا کہ سابق صدرِ آصف زرداری کو شہید بی بی کا مشن جاری رکھنے کی پاداش میں انتقامی کاروائیوں کا نشانہ بنایا جا رہا ہے،وہ دن دور نہیں، جب انتشار و خلفشار کے اندھیروں کے آگے حق و سچائی کا سورج طلوع ہوگا،وہ سورج جس کی آبیاری دخترِ مشرق کرتی رہیں۔انہوں نے کہا کہ شہید بی بی کا فلسفہ ریاست و معاشرے کو درپیش تمام مسائل کے حل کی کُنجی ہے، حالات کا تقاضا ہے، تضادات کو مفاہمت کے ذریعے حل کرنے پر فوقیت دی جائے۔

مزید : قومی