جتوئی غیر قانونی لیبارٹری بیماریوں کاگڑھ، فرضی رپورٹس بنانے کا انکشاف

  جتوئی غیر قانونی لیبارٹری بیماریوں کاگڑھ، فرضی رپورٹس بنانے کا انکشاف

  

جتوئی (نمائندہ پاکستان) جتوئی شہر میں غیرقانونی لیبارٹریوں کی بھر مار اناڑی سٹاف تعینات کرکے لوٹ مار کی انتہاکردی گئی ہے تفصیلات کے مطابق تحصیل ہیڈکوارٹر ہسپتال جتوئی کے سامنے ایک درجن سے زائد غیرقانونی کلینکل لینارٹریاں شہریوں میں بیماریاں پھیلا نے کا سبب بن رہی ہیں لیبارٹریوں میں سہولیات نہ ہونے کے برابر ہیں لیبارٹریوں پر ناتجربہ کار افراد پیسے لے کر فرضی رپورٹس بھی جاری کر دیتے ہیں اکثریت لیبارٹری مالکان ڈاکٹرز کو برابر حصہ (بقیہ نمبر44صفحہ7پر)

دے کر ان کے ریفرنس سے آنے والے مریضوں کی کھال ادھیڑتے ہیں جبکہ ڈاکٹرز کمیشن کی لالچ میں آکر مریضوں کے بلا وجہ زیادہ ٹیسٹ لکھ دیتے ہیں غیرقانونی طور پر کلینیکل لیبارٹریوں میں خون کی خرید فروخت لیبارٹریوں پر ایک سرنج کئی کئی بار استعمال کرجاتی ہیں جس کی وجہ سے کالا یرقان اور دیگر موذی امراض پھیل رہے ہیں تحصیل ہیڈکوارٹر ہسپتال جتوئی کے چند فٹ کی دکانوں میں قائم غیرقانونی لیبارٹریوں کا یہ محکمہ صحت کے افسران کی آشیرباد سے عرصہ دراز سے یہ دھندہ چل رہاہے جس کا خمیازہ مقامی سادہ لوح افراد کو بھگتنا پڑتا ہے کئی مرتبہ غلط خون لگنے کی وجہ سے مریضوں میں ری ایکشن کے واقعات بھی ہوئے ہیں انہوں نے بتایا کہ ان غیرقانونی لیبارٹریوں کے خلاف کارروائی کا اختیار ہیلتھ کیئر کمیشن کو ہے جبکہ انہوں نے اس کی رپورٹ حکام کو بھجوائی ہے مقامی شہریوں فاروق محمد اختر غلام عباس اسد عباس آصف محمد شریف اقبال خادم حسین ریاض ودیگر نے چیئرمین ہیلتھ کیئر کمیشن سے جتوئی شہر میں غیرقانونی لیبارٹریوں کو بند کرنے کا مطالبہ کیا ہے۔

رپورٹس

مزید :

ملتان صفحہ آخر -