”میں ورلڈکپ 2019ءمیں بھارت کے ہاتھوں شکست ابھی تک بھول نہیں سکا“ وقار یونس نے انگلینڈ کیخلاف سیریز سے قبل دل کا حال سنا دیا

”میں ورلڈکپ 2019ءمیں بھارت کے ہاتھوں شکست ابھی تک بھول نہیں سکا“ وقار یونس نے ...
”میں ورلڈکپ 2019ءمیں بھارت کے ہاتھوں شکست ابھی تک بھول نہیں سکا“ وقار یونس نے انگلینڈ کیخلاف سیریز سے قبل دل کا حال سنا دیا

  

لاہور (ڈیلی پاکستان آن لائن) پاکستان کرکٹ ٹیم کے باﺅلنگ کوچ وقار یونس انٹرنیشنل کرکٹ کونسل (آئی سی سی) ورلڈکپ 2019ءمیں بھارت کے ہاتھوں قومی ٹیم کی شکست ابھی تک نہیں بھول پائے اور ان کا کہنا ہے کہ غلط فیصلے پاکستانی ٹیم کو لے ڈوبے تھے۔

تفصیلات کے مطابق آئی سی سی ورلڈکپ 2019ءمیں پاکستان کو بھارت کے ہاتھوں 89رنز سے شکست ہوئی اور یوں میگا ایونٹس میں گرین شرٹس نے روایتی حریف کے مقابل مسلسل ساتویں ناکامی کا منہ دیکھا۔ ایک انٹرویو میں اس حوالے سے گفتگوکرتے ہوئے وقار یونس نے کہا کہ پاکستان نے اس میچ میں شروع سے آخر تک غلط فیصلے کئے، ٹاس جیت کر باﺅلنگ کا فیصلہ کیا گیا کیونکہ ان کا خیال تھا کہ پچ سے مدد ملے گی اور ابتداءمیں ہی وکٹیں حاصل کرتے ہوئے بلو شرٹس کو دباﺅ میں لے آئیں گے لیکن فیصلہ انتہائی غلط ثابت ہوا، اوپنرز روہت شرما اور لوکیش راہول نے باﺅلرز کے تمام حربے ناکام بناتے ہوئے 136 کی شراکت قائم کردی،بعد ازاں گرین شرٹس کی میچ پر گرفت ڈھیلی پڑتی گئی۔

قومی ٹیم کے موجودہ باﺅلنگ کوچ نے کہا کہ روایتی حریفوں کے میچز میں کوئی نہ کوئی ایسی انفرادی پرفارمنس سامنے آتی ہے جو یادگار بن جاتی ہے،ورلڈکپ 2003ءمیں سچن ٹنڈولکر نے پاکستان کی مضبوط باﺅلنگ لائن اپ کا امتحان لیا، 274کے ہدف کا تعاقب کرتے ہوئے انہوں نے میدان کے چاروں طرف سٹروکس کھیلے، سخت دباﺅ کی صورتحال میں شعیب اختر، وسیم اکرم اور میری باﺅلنگ کا سامنا کیا، ابتداءمیں ہی تیزی سے رنز بھی بٹورے،یہ ایک حیران کن اننگز تھی،اگر ٹنڈولکر سے پوچھیں تو شاید وہ بھی اسے اپنی بہترین اننگز قرار دیں۔

مزید :

کھیل -