اسلا م آباد، فعہ 144نافذ، تجارتی مراکز رات 9بجے بند کرنیکا حکم 

اسلا م آباد، فعہ 144نافذ، تجارتی مراکز رات 9بجے بند کرنیکا حکم 

  IOS Dailypakistan app Android Dailypakistan app


      اسلام آباد(مانیٹرنگ ڈیسک،نیوزایجنسیاں) سندھ اور پنجاب کے نقش قدم پر چلتے ہوئے ملک میں موجودہ توانائی کے بحران پر قابو پانے کیلئے اسلام آباد نے بھی مارکیٹیوں، شاپنگ مال، شادی ہالز اور ریسٹورنٹ کے اوقات محدود کرنے کا فیصلہ کرلیا۔اسلام آباد کے ڈپٹی کمشنر عرفان نواز میمن نے ٹوئٹر پر ضلعی مجسٹریٹ کا نوٹیفکیشن جاری کرتے ہوئے فیصلے سے آگاہ کیا۔اعلامیہ میں مارکیٹوں اور تجارتی مراکز کے حوالے سے دفعہ 144 نافذ کرنے کا حکم بھی جاری کیا گیا ہے۔حکم نامے میں کہا گیا ہے کہ تمام دکانیں، شاپنگ مالز، بیکریاں،مٹھائی کی دکانیں، دفاتر، گودام، ویئر ہاؤسز اور مویشی منڈیاں رات 9 بجے تک بند کردی جائیں گی جبکہ شادی ہالز، مارکیز اور نمائشی ہالز کے اوقات کار رات 10 بجے تک مقرر کیے گئے ہیں۔نوٹی فکیشن میں کہا گیا کہ تمام اسٹیبلشمنٹ (کمرشل یا صنعتیں)، ریسٹورنٹ، کلب، تندور، ہوٹل، کیفے، سنیما، تھیٹر یا عوامی مقامات ساڑھے 11 بجے تک بند کردیے جائیں گے۔تاہم ہسپتالوں، لیبارٹریاں، کلینک، فارمیسیز، میڈیکل سٹورز، پیٹرول پمپس، دودھ کی دکانیں اور دیگر ضروری کاروباروں کو مذکورہ پابندی سے مستثنیٰ قرار دیا گیا ہے۔نوٹیفکیشن میں اقدام کی وجوہات بیان کرتے ہوئے کہا گیا ہے کہ احکامات کا نفاذ ہنگامی بنیادوں پر کیا جائے گا، جبکہ اس پر دو ماہ تک عمل درآمد جاری رہے گا۔ڈپٹی کمشنر نے کہا کہ موجودہ گرم موسم کے سبب بجلی کی طلب میں اضافہ ہو رہا ہے جو طویل لوڈشیڈنگ کی وجہ بن رہا ہے۔اعلامیہ میں کہا گیا کہ مذکورہ پابندیوں کا اطلاق ضروری ہے تاکہ اسلام آباد میں توانائی کی ہنگامی قلت سے بچا جاسکے۔پابندیوں کا اطلاق پیر 20 جون سے ہوگاادھر تاجروں و کاروباری طبقے کی جانب سے پابندیوں پر ملا جلا ردعمل سامنے آیا، کچھ تاجر موجودہ حالات میں پابندیوں کو درست اور کچھ عید کی آمد کے باعث اوقات کار کی پابندی کو تاجروں و کاروباری طبقے کا معاشی قتل قرار دے رہے ہیں جبکہ عوام نے بجلی بحران پر قابو پانے کیلئے اوقات کار کی پابندیوں کو خوش آئند قرار دیا ہے۔
اسلام آباد پابندیاں 

مزید :

صفحہ اول -