بجٹ بحث میں اپوزیشن کی عدم شمولیت، کٹوتی کی کوئی تحریک جمع نہ کرائی

  بجٹ بحث میں اپوزیشن کی عدم شمولیت، کٹوتی کی کوئی تحریک جمع نہ کرائی

  IOS Dailypakistan app Android Dailypakistan app


     لاہور (نمائندہ خصوصی) گورنر محمد بلیغ الرحمن کی جانب سے ایوان اقبال میں بلائے گئے پنجاب اسمبلی کے اجلاس میں بجٹ پردوسرے روز بھی بحث جاری رہی،اجلاس کے آغاز میں ایک بار پھر پینل آف چیئرمین کی جانب سے پنجاب اسمبلی میں قائد حزب اختلاف سبطین خان کو اجلاس میں آنے کی دعوت دی گئی لیکن اپوزیشن نے بجٹ کے دوسرے روز بھی بحث میں حصہ نہ لیا،بجٹ پر کٹوتی کی تحریک جمع کرانے کا آخری روز کوئی کٹوتی کی تحریک جمع نہ کرائی گئی،کابل میں سکھوں کے گرودوارے میں دہشتگردی کے حملے کیخلاف مذمتی قرارداد بھی پنجاب اسمبلی میں متفقہ طور پر منظور کی گئی۔پنجاب اسمبلی کااجلاس گزشتہ روز پینل آف چیئرمین خلیل طاہر سندھو کی صدارت میں مقررہ وقت مقررہ وقت کی بجائے دو گھنٹے چھ منٹ کی تاخیر سے شروع ہوا۔اجلاس کے آغاز میں ہی ایک بار پھر پینل آف چیئرمین کی جانب سے پنجاب اسمبلی میں قائد حزب اختلاف سبطین خان کو اجلاس میں آنے کی دعوت دی گئی۔ان کا کہنا تھا کہ اپوزیشن والے ایوان میں آ کر اپنے اپنے حلقوں کی نمائندگی کریں،بجٹ پر کٹوتی کی تحریک جمع کرانے کا آخری دن ہے لیکن کوئی کٹوتی کی تحریک جمع نہ کرائی گئی۔ پنجاب اسمبلی کے اجلاس میں دوسرے روز بھی بجٹ 2022_23 پر بحث جاری رہی۔اجلاس میں کابل میں سکھوں کے گرودوارے میں دہشتگردی کے حملے کیخلاف مذمتی قرارداد پنجاب اسمبلی میں متفقہ طور پر منظور کی گئی۔قرارداد لیگی رکن اسمبلی رمیش سنگھ اورڑا کی کی جانب سے ایوان میں پیش کی گئی۔قرارداد میں کہا گیا کہ کابل میں سکھوں کے گرودوارے پر دہشتگردی حملے کی مذمت کرتے ہیں۔وفاقی حکومت سے ایوان مطالبہ کرتاہے کہ افغانستان میں سکھ مذہب سمیت دیگر اقلیتوں کو تحفظ فراہم کرے۔وقت ختم ہونے پر اجلاس آج (پیر) دوپہر 2تک ملتوی کر دیا گیا۔
پنجاب اسمبلی 

مزید :

صفحہ اول -