آزاد کشمیر ، خیبرپختونخوا، فاٹا میں بارش سے تباہی ، 40افراد جاں بحق

آزاد کشمیر ، خیبرپختونخوا، فاٹا میں بارش سے تباہی ، 40افراد جاں بحق

 مظفر آباد/پشاور/میران شاہ(اے این این،آن لائن) آزاد کشمیر،خیبر پختون خوا اور فاٹا میں بارش نے تباہی مچا دی، مٹی کے تودے اور مکانات کی چھتیں گرنے سے 40افراد جاں بحق،11زخمی،درجنوں مکانات تباہ،بیسیوں مویشی بھی لقمہ اجل بن گئے ، مختلف علاقوں میں سول انتظامیہ کے ساتھ پاک فوج نے بھی امدادی سرگرمیاں شروع کر دیں،راستے کھولنے کے لئے بھاری مشینری طلب۔تفصیلات کے مطابق گزشتہ رات ہونے والی طوفانی بارش نے آزاد کشمیر،خیبر پختون خوا اور قبائلی علاقوں میں شدید تباہی مچائی ۔آزاد کشمیر میں قدرتی آفات سے نمٹنے والے ادارے سٹیٹ ڈیزاسٹر مینجمنٹ اتھارٹی کے مطابق مظفرآباد کے نواحی علاقے سرلی سچہ میں مٹی کا تودہ اور بھاری پتھر مکان پر گرنے سے ایک ہی خاندان کے پانچ افراد ملبے تلے دب کر ہلاک ہو گئے جبکہ ایک چار سالہ بچی زخمی ہوئی ہے جسے مکان کے لبے سے زندہ نکال لیا گیا ۔سٹیٹ ڈیزاسٹر مینجمنٹ اتھارٹی کے مطابق جنوبی ضلع باغ کے علاقے اوچھاڑ میں مٹی کا تودہ مکان پر گرنے سے دو افراد ہلاک ہوئے جبکہ تین بچیاں زخمی ہوئیں۔ عبا س پور میں مکان گرنے سے 4 افراد کی ہلاکت کی اطلاع ہے۔ ان تینوں مقامات پر ریسکیو آپریشن کے بعد ہلاک ہونے والے 11 افراد کی لاشوں کو نکال لیا گیا ہے۔ جا ں بحق ہو نے والوں میں 4 بچے اور دو خواتین بھی شامل ہیں۔ مظفر آباد کے محلہ طارق آباد میں شدید بارش کے باعث ایک مکان کی چھت گرنے سے میاں بیوی اور 2 بچے جاں بحق جبکہ 4 افراد زخمی ہو گئے۔نصف رات کے بعد شروع کی جانے والی امدادی کارروائیوں میں ضلعی انتظامیہ اور پا ک فوج کے اہلکاروں سمیت سرکاری و غیر سرکاری ادارے کے رضاکاروں نے حصہ لیا۔ راولا کوٹ کے علاقے حویلی میں بھی مکان کی چھت گرنے سے 4 افراد جاں بحق ہو گئے۔پولیس کے مطابق گذشتہ روز تیز بارش کے دوران سڑک پر پھسلن سے مظفرآباد اور نیلم میں مختلف ٹریفک حادثات بھی پیش آئے جن میں دو افراد ہلاک ہوئے۔سٹیٹ ڈیزاسٹر مینجمنٹ اتھارٹی کے مطابق کشمیر میں بارشوں سے مٹی کے تودے گرنے اور مختلف مقامات پر حادثات کے دوران 13 افراد ہلاک جبکہ کم از کم دو درجن کے قریب مکانات کو مکمل یا جزوی نقصان ہوا ۔شدید بارشوں اور برف باری کے باعث ہونے والی لینڈ سلائیڈنگ کی وجہ سے وادی نیلم ،لیپہ ،فاروڈ کہوٹہ اور مظفرآباد کا دیگر علاقوں سے زمینی رابطہ منقطع ہو گیا ۔لینڈ سلائیڈنگ کے باعث شاہراہ نیلم،شاہراہ جہلم اور مظفر آباد راولپنڈی روڈ سمیت متعدد شاہرایں بند ہو گئیں ۔مظفر آباد میں لینڈ سلائیڈنگ کے باعث 8 مکانات تباہ ہو گئے جبکہ ہڈا ہاری نالے میں طغیانی کے باعث پانی بائی پاس باراز کی دکانوں میں داخل ہونے سے تاجروں کا لاکھوں روپے مالیت کا سامان ضائع ہو گیا۔ریاست میں مقامی انتظامیہ کے علاوہ پاک فوج کے جوانوں نے امدادی سرگرمیا ں شروع کر دی ہیں اور سڑکیں کھولنے کے لئے بھاری مشینری طلب کر لی گئی ہے ۔ آزاد کشمیر کے علاقے باغ میں لینڈ سلائیڈنگ کے باعث کوہالہ روڈ سمیت دیگر رابطہ سٹرکیں بند ہو گئیں جس سے مسافروں کو شدید مشکلات کا سامنا ہے۔ آزاد کشمیر میں لینڈ سلائیڈنگ سے درجنوں مکانات بھی تبا ہ ہوئے ہیں جبکہ کئی مویشی بھی ہلاک ہو ئے ہیں ۔ ادھر شمالی وزیرستان ایجنسی کے علاقے دتہ خیل میں شدید بارشوں سے مکان کی چھت گر گئی ہے جس میں دو خواتین اور چار بچے ہلاک ہو گئے ہیں۔ بارشوں سے قبائلی علاقوں کے ساتھ ساتھ خیبر پختونخوا کے مختلف شہروں میں بڑے پیمانے پر نقصان ہوا ہے۔ وسطی کرم ایجنسی کے علاقے گندال میں شدید بارش کے باعث مکان کی چھت گرنے سے ایک ہی خاندان کے 6 افراد جاں بحق ہو گئے۔ جاں بحق ہونے والوں میں ایک خاتون، 2 بچے اور 3 لڑکے شامل ہیں۔لوئر دیر کے علاقے میاں بانڈہ میں بھی تیز بارش کے باعث ایک مکان کی چھت گرنے سے ایک ہی خاندان کے5 افراد جاں بحق اور 2 زخمی ہو گئے۔ شدید بارش کے باعث کڑاکڑ پہاڑی سے پتھر گرنے سے بونیرسوات روڈ ہر قسم کی ٹریفک کے لئے بند ہوگیا۔

مزید : صفحہ اول