شرح سود میں معمولی کمی کاروباری برادری کیلئے مذاق ہے‘میاں زاہد حسین

شرح سود میں معمولی کمی کاروباری برادری کیلئے مذاق ہے‘میاں زاہد حسین

  



ملتان(نیوز رپورٹر)پاکستان بزنس مین اینڈ انٹلیکچولز فور م کے صدر اوربزنس مین پینل کے سینئر وائس چیئر مین میاں زاہد حسین(بقیہ نمبر18صفحہ12پر)

نے کہا ہے کہ مرکزی بینک کی جانب سے شرح سود میں معمولی کمی ملک بھر کی کاروباری برادری سے ایک مذاق ہے۔اسٹیٹ بینک نے صنعتکاروں اور تاجروں کی امیدوں پر پانی پھیرتے ہوئے انھیں مایوسی کی دلدل میں دھکیل دیا ہے۔ وزیر اعظم عمران خان صورتحال کا نوٹس لیں اور اقتصادی سرگرمیوں کی بحالی کے لئے پالیسی ریٹ میں کم از کم 3 فیصد کمی کروائیں۔ میاں زاہد حسین نے بز نس کمیونٹی سے گفتگو میں کہا کہ0.75 فیصد کمی کے بعد اب شرح سود 12.5فیصد ہو گئی ہے جو ملکی معیشت کو ٹیک ا?ف نہیں کرنے دے گی کیونکہ اس شرح میں کاروبار کرنا ناممکن ہے۔ انھوں نے کہا کہ درجنوں ممالک نے کرونا وائرس سے نمٹنے اور معاشی سرگرمیوں میں تیزی لانے کے لئے شرح سود میں زبردست کمی کی ہے مگر پاکستان میں صرف خانہ پری کی گئی ہے۔مرکزی بینک نے ملک بھر میں معیشت اور کاروباری برادری کو یرغمال بنایا ہوا ہے اور ہاٹ منی کے حصول کے لئے صنعتی شعبہ کو تباہ کیا جا رہا ہے جس سے لاکھوں افرادبے روزگار ہو رہے ہیں۔اس پالیسی کی وجہ سے کاروبار بند ہو رہے ہیں جس سے حکومت کو محاصل کی مد میں بھی بھاری نقصان ہو رہاہے اس لئے اس پر فوری نظر الثانی کرنے کی ضرورت ہے۔

میاں زاہد

مزید : ملتان صفحہ آخر