وہ وقت جب پاکستان نے انتہائی خطرناک بیماری کا علاج دریافت کیا اور اس کا خاتمہ کردیا

وہ وقت جب پاکستان نے انتہائی خطرناک بیماری کا علاج دریافت کیا اور اس کا خاتمہ ...
وہ وقت جب پاکستان نے انتہائی خطرناک بیماری کا علاج دریافت کیا اور اس کا خاتمہ کردیا

  



اسلام آباد(مانیٹرنگ ڈیسک) کورونا وائرس کا خوف ایسا ہے کہ منفی باتیں کچھ زیادہ ہی ہوا لے رہی ہیں مگر ذہن میں رکھنے کی بات یہ ہے کہ اپنی طرف سے پوری احتیاط کریں مگر خوف کو خود پر حاوی مت ہونے دیں۔ اگر آپ کو یاد ہو کہ دہائیوں تک ایک وباءنے دنیا کو لپیٹ میں لیے رکھا جس کا نام ’گینی ورم‘ (Guinea Worm)تھا۔ ہر سال اوسطاً 4لاکھ لوگ اس کا شکار ہو رہے تھے۔بہت سوں کو معلوم ہو گا مگر جنہیں معلوم نہیں انہیں بھی یہ جان کر خوشی ہو گی اور حوصلہ ملے گا کہ دنیا میں پہلا ملک پاکستان ہی تھا جس نے اس وباءکا خاتمہ کیا اور بعد ازاں باقی دنیا نے بھی پاکستان کے نقش قدم پر چلتے ہوئے اس بیماری سے نجات پائی۔

بحث و مباحثے کی ویب سائٹ Redditپر ایک صارف نے اس حوالے سے بتایا ہے کہ گینی ورم کے خاتمے کے لیے 1980ءمیں ورلڈ ہیلتھ اسمبلی نے ایک پروگرام شروع کیا۔ اس کے ساتھ ہی پاکستان نے بھی اپنا ’گینی ورم اریڈی کیشن پروگرام‘ شروع کیا اور 1993ءمیں اس وباءکا خاتمہ کرنے والا پہلا ملک بن گیا۔ بعد میں امریکہ، بھارت اور دیگرتمام ممالک نے بھی پاکستان کے اس پروگرام کی نقالی کی اور اپنے اپنے ملک میں اس بیماری کا خاتمہ کیا۔ اب یہ بیماری صرف دو ممالک ’چاڈ‘ اور ’انگولیا‘ میں باقی رہ گئی ہے۔

مزید : علاقائی /اسلام آباد