پاکستان میں کورونا کی آڑ میں مسجد اور دینی معاملات کو ہدف بنایا جا رہا ہے،وفاق المدارس

پاکستان میں کورونا کی آڑ میں مسجد اور دینی معاملات کو ہدف بنایا جا رہا ...

  

اسلام آباد (سٹاف رپورٹر)وفاق المدارس العربیہ پاکستان کے علمائے کرام نے کہا ہے کہ پاکستان میں کورونا کی آڑ میں مسجد، مدرسہ اور دینی معاملات کو ہدف بنایا جا رہا ہے۔ وفاق المدارس العربیہ پاکستان کے علمائے کرام کی جانب سے ملک میں کورونا وائرس کی موجودہ صورتحال کے پیش نظر مشترکہ اعلامیہ جاری کیا گیا۔اعلامیے کے مطابق مولانا مفتی محمد تقی عثمانی، مولانا محمد حنیف جالندھری، مولانا ڈاکٹر عبدالرزاق اسکندر، مولانا انوار الحق اور دیگر علماء کرام نے مشترکہ مؤقف اختیار کیا کہ پاکستان میں کورونا کی آڑ میں مسجد، مدرسہ اور دینی معاملات کو ہدف بنایا جا رہا ہے جو افسوسناک ہے لہٰذا کورونا وائرس کا مذہب اور مذہبی اقدار و روایات کے خلاف بطور ہتھیار استعمال کسی طور پر قبول نہیں۔اعلامیے میں کہا گیا کہ کورونا وائرس کو فرقہ وارانہ کشیدگی اوراشتعال انگیزی کے لیے استعمال کیا گیا مگر دینی قیادت نے فرقہ واریت کو ہوا دینے کی کوششوں کو اپنی حکمت عملی اور تدبرسے آگے نہیں بڑھنے دیا۔اعلامیے میں کہا گیا کہ اعتکاف پرپابندی، یوم علی پرپیش آنے والے واقعات سے اندازہ ہوا کہ فرقہ وارانہ کشیدگی کا ماحول گرم کرنیکی کوشش کی جارہی ہے، اس کے علاوہ متاثرہ زائرین کو واپس لاتے ہوئے اسے بیلنس کرنے کیلئے تبلیغی جماعت کو ہدف بنا کرفرقہ واریت کو ہوا دی گئی۔

وفاق المدارس

مزید :

صفحہ اول -