نئے انتخابات کا مطالبہ غیر جمہوری نہیں، قمرزمان کائرہ

        نئے انتخابات کا مطالبہ غیر جمہوری نہیں، قمرزمان کائرہ

  

لاہور (آن لائن) پیپلزپارٹی وسطی پنجاب کے صدر قمرزمان کائرہ نے کہا ہے کہ این ایف سی اور 18ہویں ترمیم سے وفاق مضبوط ہوا، قوم پرستی اور علیحدگی کی تحریکیں کمزور ہوئیں، وسائل کی تقسیم نہیں وسائل جمع کرنا اصل مسئلہ ہے،سندھ میں گورنر راج لگانے کا شوق پورا کر کے دیکھ لیں،نئے انتخابات کا مطالبہ غیر جمہوری نہیں ہے،حکومت ناکام ہو جائے تو کیا کیا جائے؟،دوبارہ انتخابات یا پھر ان ہاؤس تبدیلی کے علاہ کوئی تیسرا راستہ نہیں ہوتا۔گزشتہ یہاں پریس کانفرنس سے خطاب کرتے ہوئے قمرزمان کائرہ نے کہاکہ اختیارات اور وسائل تقسیم کرنے سے وفاق کمزور نہیں مضبوط ہوا ہے،1940کی قرارداد اور قائد اعظم کے صوبوں سے کئے گئے وعدے پورے نہ کرنے سے ملک ٹوٹا، ہم نے 1973 کے آئین اور پھر اٹھارہویں ترمیم کے ذریعے بانیان کے وعدے پورے کئے۔این ایف سی میں صوبوں کا حصہ بڑھایا تو جا سکتا ہے مگر کم نہیں ہو سکتا۔ ہم صوبوں کے وسائل کم کرنے کی ہر کوشش کو روکیں گے، اگر ہم حکومت کو روکنے میں ناکام ہوئے تو اقتدار میں آکر صوبوں کو مالی وسائل واپس دیں گے۔انہوں نے کہاکہ لاک ڈاؤن جیسے کھولا گیا اس سے حالات سنگین ہو جائیں گے۔ ابھی ٹرانسپورٹ کھول رہے ہیں وہ تو ٹرانسپورٹرز اڑے ہوئے ہیں۔حکومت سب کھول کر لوگوں کو کہتی ہے کہ گھروں میں رہو۔پہلے سینکڑوں تھے اب ہزاروں مریض آ رہے ہیں۔سندھ میں کبھی گورنر راج کبھی فنانشل ایمرجنسی لگانے کی بات ہو رہی ہے اگر یہی معیار ہے تو پھر تو پنجاب پر سب کی سب آئینی شقیں نافذ ہوں۔پنجاب میں لوگ قرنطینہ مراکز سے احتجاج کر رہے ہے۔ حکومت نے 1240ارب کے فراڈ پیکیج سے کتنا خرچ کیا ہے،بتائیں مزدوروں کو کیا دیا۔یہ جھوٹ اتنا بولتے ہیں کہ اس پر سچ کا گمان ہونے لگے۔انہوں نے کہاکہ اس وقت ٹڈی دل پورے ملک کو لپیٹ میں لے چکا ہے۔سندھ سے ہوتا بلوچستان اور پنجاب تک یلغار کر چکی ہے جب یہ حکومت آئی تو تب سے ہی پی پی چیخ رہی ہے۔ اب جب فوڈ سکیورٹی کا معاملہ بنا تو یہ کچھ متحرک ہوئے ان کو ہر فیصلے میں کہیں کے اشارے کی ضرورت ہوتی ہے،یہ بی بی فیڈنگ اور سپون فیڈنگ اب نہیں چلے گی۔انہوں نے کہاکہ آصف زرداری کے متعلق خبریں جان بوجھ کر چلائی جا رہی ہیں۔ آصف زرداری سے میری آدھا گھنٹہ بات ہوئی ہر اشو پر بات ہوئی۔آصف زرداری بیمار تھے جب جیل میں تھے، مگر اب پہلے سے حالت بہتر ہے۔حکومت کی ایجنسیاں تو ہم پر کڑی نظر رکھتی ہیں ایسی خبر ہوتی تو کیسے چھپ سکتی تھی۔عدالت کا احترام مگر عدالت کو انتظامیہ کے معاملات میں مداخلت نہیں کرنی چاہئے۔اب لاک ڈاؤن ختم کرنے کا نقصان ہوگا تو اس کا جوابدہ کون ہوگا۔ماضی میں عدالتوں کے ایسے فیصلوں کا نقصان ہوا۔

کائرہ

مزید :

صفحہ آخر -