15ستمبر تک تعلیمی اداروں کی بندش کاامکان، مالکان میں تشویش

  15ستمبر تک تعلیمی اداروں کی بندش کاامکان، مالکان میں تشویش

  

بہاولپور(ڈسٹرکٹ رپورٹر) ملک بھرمیں کرونالاک ڈاؤن کے باعث سب سے پہلے تعلیمی ادارے بندکرنے کاحکم جاری ہواتھااس کے بعد رفتہ رفتہ دیگرشعبہ جات بھی بندکیے جاتے رہے اب تقریبا2 ماہ سے زائد عرصہ گزرگیاہے یکے بعد دیگرے تمام سرکاری وغیرسرکاری ادارے ملز ٹرانسپورٹ اورمارکٹیں کھول دی گئی ہیں لیکن تعلیمی اداروں کومزید15 (بقیہ نمبر53صفحہ6پر)

جولائی تک بندرکھنے کی نویدسنادی گئی ہے اورمزیدخبریں آرہی ہیں کہ حکومت15 ستمبرتک تعلیمی اداروں کی بندش میں توسیع کرنے کاسوچ رہی ہے اچانک تعلیمی ادارے بندہوجانے کی وجہ سے درمیانے اورنچلے درجے کے تعلیمی ادارے ڈیفالٹ ہوچکے ہیں اساتذہ کی تنخواہیں اورعمارتوں کے کرایوں کی مدمیں لاکھوں روپے واجب الادا ہیں لیکن بچوں کے والدین چھٹیوں کی فیسیں دینے سے صاف انکاری ہیں جس کی وجہ سے اب تک بہاولپورضلع بھرمیں درجنوں سکول مالکان نے کرایے کی بلڈنگز خالی کرکے اساتذہ کی مستقل چھٹی کرادی جس سے سینکڑوں اساتذہ بے روزگار ہوگئے ہیں اورعیدپربھی تنخواہیں ملنے کی امیدنہ ہے خیال کیاجارہاہے کہ اگریکم جون سے نجی تعلیمی ادارے کھولنے کی اجازت نہ ملی تو50 فیصدتک نجی تعلیمی ادارے بندہوسکتے ہیں جس سے لاکھوں طالب علم تعلیمی سہولیات سے محروم ہوجائیں گے۔

مزید :

ملتان صفحہ آخر -