کویت میں متعدد شادیاں کرنے والے شوہروں کو لاک ڈاﺅن نے بڑی مشکل میں ڈال دیا، بالآخر حکومت نے بھی ان کے درد کا احساس کر کے خصوصی نرمی کردی

کویت میں متعدد شادیاں کرنے والے شوہروں کو لاک ڈاﺅن نے بڑی مشکل میں ڈال دیا، ...
کویت میں متعدد شادیاں کرنے والے شوہروں کو لاک ڈاﺅن نے بڑی مشکل میں ڈال دیا، بالآخر حکومت نے بھی ان کے درد کا احساس کر کے خصوصی نرمی کردی

  

کویت سٹی(مانیٹرنگ ڈیسک) مشرق وسطیٰ میں مردوں کے ایک سے زائد شادیاں کرنے کی روایت عام ہے اور مشرق وسطیٰ کے ممالک میں بھی کویت اس حوالے سے سرفہرست ہے جہاں اکثریت میں مردوں نے ایک سے زائد شادیاں کر رکھی ہیں جنہیں لاک ڈاﺅن نے بڑی مشکل میں ڈال دیا تھا تاہم اب حکومت نے ان کے لیے کچھ نرمی کر دی ہے۔ ویب سائٹ دی سٹیزن کے مطابق ان مردوں میں سے اکثر نے اپنی بیویوں کو الگ الگ گھروں میں رکھا ہوا تھا اور ان کے لیے وقت مختص کر رکھا تھا۔

تاہم لاک ڈاﺅن کی وجہ سے وہ جس بیوی کے ہاں تھے، وہیں پھنس کر رہ گئے اور دوسری بیویاں کی راہ دیکھتی رہ گئیں۔ کویت میں لاک ڈاﺅن بھی ایسا سخت کیا گیا ہے کہ فیس ماسک نہ پہننے اور لاک ڈاﺅن کی دیگر خلاف ورزیاں کرنے پر 16ہزار ڈالر تک جرمانہ اور 3ماہ تک قید کی سزا ہو سکتی ہے۔ ایسے میں یہ مرد کیسے ایک بیوی سے دوسری کے ہاں جا سکتے تھے۔ ان کی اس مشکل کو دیکھتے ہوئے حکومت نے اعلان کر دیا ہے کہ جن مردوں کی ایک سے زائد بیویاں ہیں وہ اپنی دوسری بیویوں سے ملنے جا سکتے ہیں۔رپورٹ کے مطابق حکام نے ایسے مردوں کے لیے الیکٹرک پرمٹ جاری کر دیئے ہیں جن پر وہ ہفتے میں دو بار ایک گھنٹے کے لیے دیگر بیویوں کے پاس جا سکتے ہیں۔

مزید :

عرب دنیا -