یوٹیلٹی سٹور پر اشیاء کا ناقص معیار ، آٹا کھانے کے قابل نہیں، ایسی سبسڈی کا کیا فائدہ ؟ غریب عوام بلبلا اٹھے

یوٹیلٹی سٹور پر اشیاء کا ناقص معیار ، آٹا کھانے کے قابل نہیں، ایسی سبسڈی کا ...
 یوٹیلٹی سٹور پر اشیاء کا ناقص معیار ، آٹا کھانے کے قابل نہیں، ایسی سبسڈی کا کیا فائدہ ؟ غریب عوام بلبلا اٹھے

  

لاہور (دیبا مرزا  سے) شہر بھر کے یوٹیلیٹی سٹورز پر وزیراعظم سبسڈی پروگرام کے تحت چینی 70 آٹا 400روپے،گھی درجہ دوم260روپے میں دستیاب ہے جبکہ عوام کا کہنا ہے کہ آٹا سستا تو مل رہا ہے لیکن آٹے کی کوالٹی اچھی نہیں بعض دفعہ تو آٹا کھانے کے بھی قابل نہیں ہوتا، ریلیف کے ساتھ ساتھ اشیاء خورو نوش کی کوالٹی کو بھی بہتر کیا جائے۔ شہر بھر میں مہنگائی سے ریلیف فراہم کرنیوالے یوٹیلیٹی سٹورز پر وزیر اعظم پروگرام کے تحت وزیراعظم شہباز شریف نے حکم دیا تھا کہ عوام کو سستا آٹا فراہم کیا جائے جس کی قیمت 400 روپے مقرر کی ہے جبکہ چینی 70 روپے فی کلو دستیاب ہے مختلف سٹورز پر درجہ اول اور درجہ دوم گھی دونوں ہی اقسام کا موجود ہے جبکہ درجہ دوم فی کلو 260 روپے ہے۔اس حوالے سے روزنامہ" پاکستان" کی طرف سے کئے گئے سروے میں گفتگو کرتے ہوئے شہریوں کا کہنا ہے کہ اب کچھ دنوں سے تو ہمیں یوٹیلیٹی سٹورز پر اشیاء خورونوش مل رہی ہیں  مہنگائی میں تو کمی نہیں آئی البتہ وزیراعظم کی جانب سے بنیادی اشیاء خورونوش کی قیمتیں کم کرنا انتہائی خوش آئند اقدام ہے۔  پہلے تو ہمیں آٹا نہیں مل رہا تھا ، اب  مل جاتا ہے لیکن آٹے کی کوالٹی انتہائی لو لیول کی ہے بعض دفعہ تو آٹا کھانے کے قابل بھی نہیں ہوتا ۔ قیمت میں کمی کا یہ مطلب نہیں اشیاء  کی کوالٹی میں کمی کر دی جائے ۔ ہمارا حکومت سے مطالبہ ہے کہ وہ یوٹیلیٹی سٹورز پر دستیاب اشیاء کے لیے کوالٹی چیک کا بھی انتظام کریں تاکہ عوام کو سستی اشیاء کے ساتھ ساتھ اچھی کوالٹی بھی میسر ہو۔ 

مزید :

علاقائی -پنجاب -لاہور -