امیگریشن قوانین پر عملدرآمد، ورنہ امداد بند، وائٹ ہاؤس کی 29شہروں کو ڈیڈ لائن

امیگریشن قوانین پر عملدرآمد، ورنہ امداد بند، وائٹ ہاؤس کی 29شہروں کو ڈیڈ لائن

  



واشنگٹن (اظہر زمان، بیورو چیف) وائٹ ہاؤس نے غیر قانونی افراد کو پناہ دینے والے 29 شہروں کو وارننگ دی ہے اگر امیگر یشن قوانین پر عملدرآمد نہ کیا تو ان کی وفاقی امداد بند کردی جائے گی، اٹارنی جنرل چیف سیشنز نے تازہ نیوز ریلیز میں ان شہروں کی ا نتظا میہ کو 8 د سمبر کی ڈ یڈ لائن دی ہے، قبل ازیں امیگریشن سے متعلق قوانین کی خلاف ورزی کے مرتکب ان شہروں کی مقامی انتظامیہ کو قائم مقام اسسٹنٹ اٹارنی جنرل ایلن ہینسن کی طرف سے مراسلے بھیجے جاچکے ہیں، خلاف ورزی کرنیوالے 29 شہروں میں واشنگٹن ڈی سی کے علاوہ پنسلوینیا، اور یگو ن، ورساؤنٹ اور کیلیفورنیا سمیت دیگر ریاستوں کے اہم شہر شامل ہیں، پریس ریلیز میں کہا گیا ہے معاملہ صرف غیر قانونی تارکین وطن کا نہیں بلکہ ان میں شامل جرائم پیشہ افراد کا ہے جن کو پناہ دینے کے عمل کو برداشت نہیں کیا جاسکتا، یاد رہے صدر ٹرمپ نے جنوری میں ایک ایگزیکٹو آرڈر جاری کیا تھا جس کے تحت محکمہ انصاف کو ہدایت کی گئی تھی کہ وہ ایسے شہروں کی گرانٹس بند کردیں جو وفاقی امیگریشن قوانین کی خلاف ورزی کے مرتکب پائے جائیں، محکمہ انصاف کی طرف سے گزشتہ بدھ کے روز 29 شہروں کو جاری ہونیوالے مراسلے کو بعد فلڈ ڈلفیا کے ایک وفاقی جج نے اپنے آرڈر کے ذریعے وفاقی حکومت کو گرانٹ کو روکنے کے اقدام کو کالعدم قرار دیدیا، اس کے علاوہ کیلفیورنیا کی ایک بڑی ریاست کے گورنر جیری براؤن نے ریاستی اداروں کے وفاقی محکمہ انصاف کیساتھ رابطے کو محدود کرنے کا آرڈر جا ر ی کررکھا ہے، یہ ریاست ہسپانوی نسل کے تارکین وطن کا بہت بڑا گڑھ ہے۔

مزید : صفحہ آخر