پنجاب کانسٹیبلری سکینڈل ‘ اینٹی کرپشن کا مقدمہ نیب کو دینے سے انکار

پنجاب کانسٹیبلری سکینڈل ‘ اینٹی کرپشن کا مقدمہ نیب کو دینے سے انکار

ملتان ( نمائندہ خصوصی ) ڈائریکٹر جنرل اینٹی کرپشن اسٹیبلشمنٹ نے پنجاب کانسٹیبلری ملتان بنٹالین تھری سکینڈی کا مقدمہ نیب ملتان بیورو کو دینے سے انکار کردیا ڈی جی انٹی کرپشن اسٹبلشمنٹ نے ڈائریکٹر انٹی کرپشن اسٹبلشمنٹ ملتان ریجن کو فوری طوپرر مقدمہ کی تفتیش مکمل کرکے ملزمان کی(بقیہ نمبر33صفحہ12پر )

گرفتاری کے احکامات جاری کردئیے ۔ ڈی جی انٹی کرپشن پنجاب کے انکار کے بعد نیب ملتان بیورو کے افسران مایوسی کا شکار ہوگئے ہیں معلوم ہوا ہے کہ اکاؤٹنٹ جنرل پنجاب نے پنجاب کانسٹیبلری ملتان بٹالین میں جی پی فنڈ اور بقایا جات کی مد میں کروڑوں روپے کے فراڈ کا ریفرنس نیب کو ارسال کیا ۔ جس کے بعد نیب ملتان بیورو نے اس رپورٹ کو تیار کرنے والے آفیسر سے بریفنگ لی ۔ اسی سے قبل ایس پی پنجاب کانسٹیبلری ملتان بٹالین محمود الحسن نے 3کروڑ 93روپے کے فراڈ کا مقدمہ انٹی کرپشن اسٹبلشمنٹ میں درج کرادیا ۔ پولیس کیڈر سے تعلق رکھنے والے سابق ڈائریکٹر گوہر مشتاق بھٹہ نے مقدمہ کی تفتیش کا سارا اختیار ایس پی محمود الحسن کے سپر د کردیا ۔ جو مقدمہ میں ملوث پولیس اہل کاروں کو گرفتار کرواتے رہے اور ناجائز حراست میں رکھ کر مرضی کے بیانات دلواتے رہے معلوم ہوا ہے کہ دوران حراست گرفتار ملزمان پر تشدد کی انتہا کردی گئی ۔ اس طرح کی تمام کارروائیاں گوہر مشتاق بھٹہ کے ٹرانسفر تک جاری رہیںٰ لیکن مقدمہ کی تفتیش ٹرانسفر ہونے کے بعد اس سکینڈل کی تصویر کا دوسرا رخ سامنے آیا ۔ جس میں ایس پی محمود الحسن کا کردار سامنے آنے لگا ۔ اسی دوران نیب نے اے جی پنجاب کے ریفرنس پر انکوائری شروع کردی اور ڈی جی انٹی کرپشن پنجاب سے مقدمہ نیب کوریفر کرنے کا مراسلہ جاری کردیا بتایا گیا ہے ڈی جی انٹی کرپشن اسٹبلشمنٹ پنجاب نے اس سکینڈل کی تفتیشی ٹیم کو لاہور طلب کیا اور اب تک جاری تفتیش کی بریفنگ لی ۔ اس بریفنگ کے دوران ڈی جی انٹی کرپشنی پنجاب کو ملزمان کے بیانات ، ریکوری ، سرکاری ونجی مالیاتی اداروں کے افسران ، ڈسٹرکٹ اکاؤنٹس آفس ملتان کے افسران اور اہل کاروں کے بیانات اور تفیتشی ٹیم کی سفارشات سے آگاہ کیا گیا ۔ ڈی جی پنجاب نے تمام بریفنگ کے بعد نیب ملتان بیورو کو باضابطہ طور پر آگاہ کردیا اور مقدمہ کی تفتیش نیب ملتان بیورو کو ٹرانسفر کرنے سے انکار کردیا ۔ بتایا گیا ہے انٹی کرپشن پنجاب کے انکار کے بعد اب نیب کو اس مقدمہ کی نئے سرے سے تفتیش کرنا پڑے گی ایک طویل اور محنت طلب کام ہے ۔ دریں اثنا ڈسٹرکٹ اکاؤنٹس آفس ملتان نے پنجاب کانسٹبیلری ملتان تھری سکینڈ کا ریکارڈ نیب ملتان بیورو کے حوالے کردیا ۔ معلوم ہوا ہے 600سے زائد اہل کاروں کی پرسنل فائلز ، بینک اکاؤنٹس ، پرسنل نمبرز ، مانیٹرنگ فورم نیب ملتان کو جمع کرائے گئے ہیں ۔

مزید : ملتان صفحہ آخر