ایران کی پاکستان کو دہشتگردوں سے لڑنے کیلئے فورس کے قیام کی تجویز

ایران کی پاکستان کو دہشتگردوں سے لڑنے کیلئے فورس کے قیام کی تجویز
ایران کی پاکستان کو دہشتگردوں سے لڑنے کیلئے فورس کے قیام کی تجویز

  

لاہور (ویب ڈیسک) ایرانی پاسداران انقلاب کے سربراہ میجر محمد علی جعفری نے پاک فوج کو ایرانی ”بسیج فورس“ کی طرز پر ایک فورس کے قیام کی تجویز دی ہے جو کہ پاکستانی فوج کے شانہ بشانہ دہشتگردوں سے لڑے۔ فورس کی تیاری میں ایرانی آرمڈ فورسز کے تجربات کے ذریعے مدد کرنے کو تیار ہیں، ایرانی کمانڈر ۔ شام اور عراق سے داعش جنگجو پاکستان میں داخل ہونے کی کوشش کرسکتے ہیں، بریگیڈیئر جنرل محمد پاکپور کا پاکستان حکام کو انتباہ۔

معروف عربی اخبار الشرف الاوسط نے دعویٰ کیا ہے کہ چیف آف آرمی سٹاف جنرل قمر جاوید باجوہ کے حالیہ دورہ ایران کے دوران انہیں یہ تجویز ”ایرانی پاسداران انقلاب“ کے سربراہ نے تہران میں ملاقات کے دوران دی۔ جنرل محمد علی جعفری کا کہنا تھا کہ سکیورٹی خطرات سے نمٹنے کے لئے پاکستان میں ”بسیج“ جس کا مکمل نام ”سازمان بسیج مستضعفین“ ہے کی طرز پر ایک عوامی فورس کی تشکیل کی جائے جو افواج پاکستان کے ساتھ مل کر دہشتگردوں سے لڑ سکیں۔ انہوں نے نشاندہی کرتے ہوئے کہا کہ یہ اقدام شام اور عراق میں کامیاب رہا ہے، جبکہ انہوں نے ریاست ہائے متحدہ امریکہ پر الزام عائد کیا کہ وہ ”پاکستان کے استحکام کو خواب کرنے کی کوشش کررہا ہے۔ جعفری نے کہا کہ ان کا ملک گزشتہ چار دہائیوں سے ”دشمنانہ خطرات“ سے مٹنے کے لئے پاکستان کو اپنے دفاعی اور عوامی فورسز کے تجربات منتقل کرنے کو تیار ہے۔

دوسری جانب عربی اخبار نے یہ بھی دعویٰ کیا ہے کہ ایرانی پاسداران انقلاب کی سرکاری نیوز ایجنسی ”سپاہ“ کے مطابق زمینی افوج کے کماںڈر جنرل محمد پاکپور نے آرمی چیف کو آگاہ کیا ہے کہ مستقبل میں شام اور عراق میں مسلسل شکست کے بعد داعش کے جنجو بڑی تعدادمیں پاکستانی سرحدی علاقوں میں پناہ لینے کی کوشش کرسکتے ہیں جس کے لئے ضروری ہے کہ ابھی سے پیش قدمی کی جائے اور پاک ایران بارڈر کے ساتھ ساتھ ایران افغان سرحد پر بھی پٹرولنگ میں اضافہ کیا جائے گا تاکہ عراقی کردستان والا ماڈل یہاں نہ دہرایا جاسکے اور ان بھگوڑوں کے لئے ان ممالک میں کوئی بھی جگہ محفوظ نہ بن سکے۔

مزید : لاہور