سیکڑوں لوگ بے روزگار ہیں،ریٹائرڈ فوجیوں کوپیف میں بھرتی کرنے کی کیا ضرورت پڑ گئی تھی؟ہائی کورٹ کاحکومت سے استفسار

سیکڑوں لوگ بے روزگار ہیں،ریٹائرڈ فوجیوں کوپیف میں بھرتی کرنے کی کیا ضرورت پڑ ...
سیکڑوں لوگ بے روزگار ہیں،ریٹائرڈ فوجیوں کوپیف میں بھرتی کرنے کی کیا ضرورت پڑ گئی تھی؟ہائی کورٹ کاحکومت سے استفسار

  

لاہور(نامہ نگار خصوصی )لاہورہائیکورٹ نے پنجاب ایجوکیش فاﺅنڈیشن میں 126 مانیٹرنگ افسروں کی بھرتیوں کے خلاف درخواست پر نوٹس جاری کرتے ہوئے استفسار کیا ہے کہ بتایا جائے کہ پیف کو ریٹائرڈ فوجی افسروں کی کیا ضرورت پڑ گئی تھی? سیکڑوں لوگ بے روزگار ہیں اور یہاں پنشنرز کو بھرتی کیا جا رہا ہے۔

مسٹر جسٹس شمس محمود مرزا نے قدیر اسلم کی درخواست پر سماعت کی، درخواست گزار کی طرف سے چودھری شعیب سلیم ایڈووکیٹ نے موقف اختیار کیا کہ پنجاب ایجوکیشن فاﺅنڈیشن نے 32اضلاع کے لئے 126ڈسٹرکٹ مانیٹرنگ آفسیرز کو غیرقانونی طور پر بھرتی کیا ہے، پیف نے ریکروٹمنٹ پالیسی کو پس پشت ڈالتے ہوئے بھرتیوں کا اشتہار جاری کیا جس میں ریٹائرڈ فوجیوں کو ترجیح دینے کا کہا گیا جبکہ ریکروٹمنٹ پالیسی میں پہلے ہی ایکس سروس مین کو اضافی5نمبرز دیئے جاتے ہیں اور اشتہار میں ریٹائرڈ فوجیوں کو ترجیح دے کر درخواست گزار کا استحصال کیا گیا ہے ،پنجاب ایجوکیشن فاﺅنڈیشن میں 126 مانیٹرنگ افسروں کی بھرتیاں کالعدم قرار دے کر پیف ریکروٹمنٹ پالیسی کے مطابق بھرتیاں کرنے کا حکم دیا جائے، عدالت نے پنجاب حکومت کے وکیل سے استفسار کیا کہ پنجاب ایجوکیشن فاﺅنڈیشن کو ریٹائرڈ فوجی افسروں کی کیا ضرورت پیش آگئی جبکہ وہ پہلے سے ہی پنشن وصول کر رہے ہیں، جو سویلین بے روزگار ہیں وہ کہاں جائیں؟ پنجاب حکومت کے وکیل نے موقف اختیار کیا کہ پیف نے پالیسی کے مطابق بھرتیاں کی ہیں اور یہ درخواست پالیسی معاملہ ہونے کی بنیاد پر قابل سماعت نہیں ،درخواست کو مسترد کیا جائے، عدالت نے سرکاری وکیل کے دلائل مسترد کرتے ہوئے پنجاب ایجوکیشن فاﺅنڈیش اور سیکرٹری سکولز ایجوکیشن کو نوٹس جاری کرتے ہوئے 2 ہفتوں میں جواب طلب کر لیاہے۔

مزید : لاہور