مصطفی کمال ودیگر کیخلاف غیر قانونی الاٹمنٹ کا ریفرنس قابل سماعت قرار

مصطفی کمال ودیگر کیخلاف غیر قانونی الاٹمنٹ کا ریفرنس قابل سماعت قرار

  



کراچی (این این آئی) احتساب عدالت نے پاک سرزمین پارٹی کے سربراہ مصطفی کمال کیخلاف سرکاری اراضی کی غیر قانونی الاٹمنٹ کا ریفرنس قابل سماعت قرار دے دیا،مصطفی کمال ودیگرملزمان پر کلفٹن میں پلاٹوں کی غیر قانونی الاٹمنٹ کا الزام ہے۔تفصیلات کے مطابق احتساب عدالت میں ساحل سمندر پر غیرقانونی طور پر الاٹمنٹ کیس کی سماعت ہوئی، چیئر مین پی ایس پی مصطفی کمال، سابق ڈی جی ایس بی سی اے افتخار قائمخانی اور دیگر ملزمان عدالت میں پیش ہوئے۔عدالت نے سابق ڈی جی ایس بی سی اے افتخار قائمخانی، داود جان، زین ملک و دیگر کی جانب سے ریفرنس کے ناقابل سماعت ہونے کی درخواست پر فیصلہ سنا دیا، فیصلے میں ملزمان کی درخواست مسترد کرتے ہوئے ریفرنس قابل سماعت قرار دے دیا۔عدالت نے ریفرنس کی مزید سماعت 4 دسمبر تک ملتوی کردی، بعد ازاں پاک سرزمین پارٹی کے سربراہ مصطفی کمال نے عدالت میں پیشی کے موقع پر میڈیا سے گفتگو کرتے ہوئے کہا کہ میرے اوپر لگائے گئے الزامات کا کوئی سر پیر نہیں ہے، سندھ میں کتوں کے کاٹنے سے درجنوں لوگ مر رہے ہیں اور سندھ حکومت اپنی اجارہ داری قائم کرنے میں لگی ہوئی ہے،انہوں نے کہا سندھ کے بچوں کو کتے کاٹ رہے ہیں، ویکسین نہیں ہے، لوگ بیماریوں سے مر رہے ہیں، مہنگائی عروج پر پہنچ گئی ہے، بانی ایم کیو ایم نے بھارت میں سیاسی پناہ کی درخواست دی ہے، بابری مسجدکے فیصلے کو صحیح کہہ رہے ہیں، 3 سال قبل میری کی گئی پریس کانفرنس بالکل صحیح ثابت ہوئی۔مصطفی کمال نے کہا کہ کراچی سے کشمور اور کشمور سے کشمیر تک کے نوجوانوں کو کہتا ہوں کہ میرے ساتھ آئیں، ہم ملک ٹھیک کر سکتے ہیں۔

مصطفی کمال

مزید : علاقائی