’دھرنے کے دوران علامہ خادم رضوی کو 103 بخار اور ڈرپ لگی ہوئی تھی، انہیں ڈاکٹرز نے کیا ہدایت کی جو نظر انداز کی گئی؟ تفصیلات سامنے آگئیں

’دھرنے کے دوران علامہ خادم رضوی کو 103 بخار اور ڈرپ لگی ہوئی تھی، انہیں ڈاکٹرز ...
’دھرنے کے دوران علامہ خادم رضوی کو 103 بخار اور ڈرپ لگی ہوئی تھی، انہیں ڈاکٹرز نے کیا ہدایت کی جو نظر انداز کی گئی؟ تفصیلات سامنے آگئیں

  

لاہور(ڈیلی پاکستان آن لائن)تحریک لبیک پاکستان کے سربراہ علامہ خادم حسین رضوی کے انتقال کی تصدیق ان کے صاحبزادے حافظ سعد رضوی نے کردی ہے جبکہ ان کی رہائش گاہ کے باہر تحریک لبیک کے ہزاروں کارکن جمع ہیں اور دھاڑیں مار کر رو رہے ہیں جبکہ کارکنوں کی آمد کا سلسلہ بھی جاری ہے،علامہ خادم حسین رضوی کی نماز جنازہ آج جمعہ کے روز ادا کی جائے گی جس میں لاکھوں افراد کے جمع ہونے کی توقع ہے،دوسری طرف سوشل میڈٖیا پر علامہ خادم حسین رضوی کے انتقال اور بیماری کے حوالے سے قیاس آرائیاں جاری ہیں تاہم حقیقت یہ ہے کہ  علامہ خادم حسین رضوی گذشتہ چند روز سے شدید بیمار تھے اور حالیہ فیض آباد دھرنے کے دوران بھی تحریک لبیک کے سربراہ 103 بخار میں مبتلا تھے اور دوران دھرنا انہیں وہیل چیئر پرہی ڈرپس بھی لگتی رہی ہیں۔

تفصیلات کے مطابق  علامہ خادم حسین رضوی کے انتقال نے پورے ملک کے دینی طبقوں میں سوگ کی کیفیت طاری کر دی ہے،علامہ خادم حسین رضوی گذشتہ چند روز سے سخت بیمار تھے تاہم بیماری کی حالت میں ہی وہ تین دن تک گستاخانہ خاکوں  اور فرانس کے خلاف فیض آباد میں ہونے والے دھرنے کی نہ صرف قیادت کرتے رہے بلکہ 103 بخار ہونے کے باوجود سخت سردی میں ہی دھرنے کے شرکاء کے ساتھ مسلسل موجود رہے،علامہ خادم حسین رضوی کو فیض آباد دھرنے کے دوران وہیل چیئر پر ہی ڈاکٹرز نے ڈرپیں بھی لگائیں،ڈاکٹرز نے علامہ خادم حسین رضوی کو ہسپتال منتقل ہونے کا مشورہ بھی دیا تاہم انہوں نے دھرنے کی جگہ سے جانے سے انکار کر دیا تھا ۔

مزید :

علاقائی -پنجاب -لاہور -