سیلیکٹڈ حکمرانوں کے دن گنے جا چکے، سکندر شیر پاؤ 

  سیلیکٹڈ حکمرانوں کے دن گنے جا چکے، سکندر شیر پاؤ 

  

کوھاٹ (بیورو رپورٹ) قومی وطن پارٹی کے رہنما سکندر خان شیرپاؤ نے کہاہے کہ سیلیکٹڈ حکمرانوں کے دن گنے جا چکے ہیں خیبر پختونخوا میں ساڑھے سات سال اور مرکز میں ڈھائی سال سے تحریک انصاف برسر اقتدار ہے انہوں نے نیا پاکستان بنانے‘ ایک کروڑ نوکریاں دینے‘ 50 لاکھ گھر تعمیر کرنے اور مدینہ کی طرز پر فلاحی ریاست قائم کرنے کے وعدے کیے تھے مگر ان میں سے کچھ بھی تو نہ بن سکا البتہ مہنگائی اور مسائل میں اضافے نے 22 کروڑ عوام کا جینا محال کر دیا وہ کوھاٹ پریس کلب میں محمود الاسلام ایڈووکیٹ سمیت درجنوں سیاسی شخصیات کی قومی وطن پارٹی میں شمولیت اختیار کرنے کی تقریب سے خطاب کر رہے تھے سکندر شیرپاؤ نے پارٹی میں شامل ہونے والوں کو ٹوپیاں پہنائیں اور مبارک باد دی تقریب سے خطاب کے دوران انہوں نے کہا کہ کرپشن کے خلاف جہاد کرنے والوں کی خارجہ پالیسی نے پاکستان کو دنیا میں تنہا کر دیا سعودی عرب جیسا دوست ملک ناراض کر دیا گیا ان کی داخلہ پالیسی کی سمجھ ہی نہیں آ رہی کہ ملک کس سمت میں جا رہا ہے انہوں نے کہا کہ بیرون ملک قرضہ لینے کے بجائے خود کشی کو ترجیح دینے والوں نے ملک کو آئی ایم ایف کے حوالے کر دیا اور ڈھائی سال کے دوران پی ٹی آئی حکومت نے 14 ہزار ارب روپے کا قرضہ لیا اور معاشی پالیسی کو بیرونی قوتوں کے ہاں گروی رکھ دیا گیا اس حکومت کا ریلیف پیکیج آٹا‘ چینی اور ادویات کو غریب کی پہنچ سے دور کرنا ہے انہوں نے کہا کہ بجلی گیس ادویات اور دیگر اشیاء مہنگی کرنے کی سمری پر دستخط کرنے کے بعدعمران خان وزراء سے پوچھتے ہیں کہ مہنگائی کیوں کنٹرول نہیں ہو رہی انہوں نے کہا کہ جنوبی اضلاع تیل و گیس کی معدنی دولت سے مالا مال ہے جس کا سبب صوبائی حکومت کو اسلام آباد سے ریموٹ کنٹرول کے ذریعے چلاتا ہے ہم صوبائی خود مختاری چاہتے ہیں ان کا کہنا تھا کہ چشمہ رائٹ بینک کنال کا منصوبہ ہم نے مسلم لیگ ن کے وزیر خزانہ اسحاق ڈار سے منظور کروایا تھا مگر تحریک انصاف کے حکمرانوں نے اسے اے ڈی پی سے نکال دیا جنوبی اضلاع کے لیے موٹر وے کا اعلان ہوا مگر ابھی تک کوئی پیش رفت نہ ہو سکی ہیلتھ ایمرجنسی نافذ کی گئی مگر ہسپتالوں کی حالت آپ سب کے سامنے ہے ریلوے معاشی ترقی کا ایک اہم ذریعہ ہے مگر انہوں نے ریلوے روٹس کو کمر کر دیا یہ کیس ریاست مدینہ ہے جہاں ترقی اور معیشت معکوس ہے سکندر شیرپاؤ نے کہاکہ آئین کی رو سے معدنی پیداوار پر اس علاقہ کے عوام کا حق مقدم ہوتا ہے مگر بجلی خیبر پختونخوا اور گیس کوھاٹ کی پیداوار ہے بدقسمتی سے دوسرے صوبوں کا اس پیداوار سے کام تو چل رہا ہے مگر پیداواری علاقوں کے لوگ اس سے محروم ہیں جس کا واضح مطلب ہے کہ سیلیکٹڈ حکمران حکومت چلانے کے قابل نہیں جنہوں نے سارے نظام کو درہم برہم کر کے رکھ دیا ہے ایسے لوگوں سے نجات حاصل کرنے کا وقت آ گیا ہے کہ یہ عوامی مسائل حل کرنے کے بجائے اس میں اضافے کا سبب بن رہے ہیں انہوں نے کہا کہ پاکستان میں حقیقی جمہوریت کی بحالی‘ آئین و قانون کی بالادستی اور عوام کو ریلیف دینے کے لیے پاکستان ڈیموکریٹک مومنٹ کے نام سے اپوزیشن جماعتوں کا اتحاد قائم ہو چکا ہے اور یہ امر باعث مسرت ہے کہ قومی وطن پارٹی بھی اس اتحاد کا حصہ ہے ہم خیبر پختونخوا حکومت کی خودمختاری چاہتے ہیں قومی وطن پارٹی پختونوں کی حقوق اور پاسداری کے پسے طبقات کے عوام کی آواز ہے ہم سیلیکٹڈ حکمرانوں کو مزید برداشت نہیں کریں گے پشاور میں پی ڈی ایم کے 22 نومبر کے جلسہ میں بھرپور شرکت کو یقینی بنائیں گے ان شاء اللہ یہ جلسہ حکمرانوں کے تابوت میں آخری کیل ثابت ہو گا تقریب سے درجنوں ساتھیوں سمیت کیو ڈبلیو پی میں شمولیت اختیار کرنے والے محمود الاسلام ایڈووکیٹ‘ یوتھ رہنما ارشد خان‘ پیر آصف شاہ‘ جاوید اقبال و دیگر کے علاوہ سابق ممبر صوبائی اسمبلی اور وائس چیئرمین قومی وطن پارٹی خیبر پختونخوا عدنان وزیر نے بھی خطاب کیا اور پختونوں کے حقوق کے لیے جدوجہد کرنے والی جماعت قومی وطن پارٹی کے ہاتھ مضبوط کرنے کی ضرورت پر زور دیا۔ 

مزید :

پشاورصفحہ آخر -