اِک معصوم سی لڑکی| سحر نصیر |

 اِک معصوم سی لڑکی| سحر نصیر |
 اِک معصوم سی لڑکی| سحر نصیر |

  

 اِک معصوم سی لڑکی

دنیا کی حقیقت سے ناواقف

 ہر اِک پر اعتماد کرنے والی

اِک معصوم سی لڑکی

ابرِباراں میں  برق سے ڈرنے والی

 جذبوں کو دل میں رکھنے والی

 کسی کے وصل کے قیاس میں رہنے والی

اِک معصوم سی لڑکی

کسی کے ہجر میں روتی ہوئی

  کربِ مسلسل میں صبر کرتی

 اپنی خلوت میں رہتی ہے اکیلی

 لوگوں کے الزامات پر خاموش  

دکھوں کے ہوتے ہوئےبھی  مسکراتی ہے 

ہر معاملے میں فی امان اللہ کہنے والی 

اِک معصوم سی لڑکی

شاعر:  سحر نصیر

Ik   Masoom   Si   LArrki

Dunya   Ki   Haqeeqat   Say   Nawaaqif

Har   Ik   Par   Aitmaad   Karnay   Waali

Ik   Masoom   Si   Larrki

Abr-e-Baraan   Men   Barq   Say   Darnay   Waali

Jazbon   Ko   Dil   Men   Rakhnay   Waali

Kisi   K   Wasl   K   Qayaas   Men   Rehnay   Waali

Ik   Masoom   Si   Larrki

 Kisi   K   Hijr   Men   Roti   Hui

Karb-e-Musalsal   Men   Sabr   Karti   Hui

 Apni   Khalwat    Men   Rehti   Hay   Akaili

Logon   K   Ilzaam   Par   Khamosh

 Dukhon   Men   Bhi   Muskuraati   Hay

Har   Muaamlay   Men   Fi   Amaan    Allah    Kehnay   Waali

Ik   Masoom   Si   Larrki

 

Poetess: Sahar   Naseer

 

مزید :

شاعری -سنجیدہ شاعری -غمگین شاعری -