کھاد ٹوکن سبسڈی میں اربوں روپے کافراڈ، نیا سکینڈل بے نقاب 

کھاد ٹوکن سبسڈی میں اربوں روپے کافراڈ، نیا سکینڈل بے نقاب 

  

 کوٹ سبزل، بہاولپور،نورپورنورنگا(نمائندہ پاکستان،ڈسٹرکٹ رپورٹر،نامہ نگار)ڈی اے پی کھادکی ٹوکن سبسڈی میں اربوں روپے کے فراڈ کا انکشاف ہوا ہے کھاد ڈیلرز تک پہنچنے سے پہلے ہی پوری سیریل کی رقم نکال لی جاتی ہے  فصیل کے مطابق وفاقی حکومت نے کسانوں کو ڈی اے پی کھاد پر ایک ہزار روپے کی سبسڈی دینے کیلئے ہربوری کے اندرکی جانب ٹوکن چسپاں کرایا ہے، اس کیلئے ہر فرٹیلائزرز (بقیہ نمبر13صفحہ6پر)

کمپنی حکومت کو بتاتی ہے کہ ہماری اتنے ٹن کھاد اچکی ہیجس پر گورنمنٹ آف پاکستان انہیں اس مقدار کے حساب سے ٹوکن فراہم کرتی ہے مگر جب کاشتکار کھاد استعمال کرکے ان ٹوکنوں کوکیش کرانے جاتاہے تواسے پیسے ملنے کی بجائے جواب آتا ہے کہ آپکا ٹوکن استعمال ہوچکا ہے،اس طرح پوری سیریل کی رقم کیش کرائی جارہی ہے،معلوم ہوا ہے کہ کھاد جب فیکٹریوں سے نکل کر ڈیلرز کے پاس روانہ کی جاتی ہے تو وہاں پہنچنے سے قبل ٹوکن کیش ہوچکے ہوتے ہیں،آٹا، چینی سکینڈل کے بعد یہ ایک بہت بڑا فراڈ سکینڈل ہے،ہیکرز تک اس کی معلومات پہنچانے میں متعلقہ حکومتی ادارے یا پھر فرٹیلائزرز کمپنیاں ملوث معلوم ہوتی ہیں،کسانوں کو اس وقت کھاد کے اس مصنوعی بحران کے میں کھادیں بلیک میں خریدنی پڑ رہی ہیں،تو انہیں سبسڈی کے حصول کا ہوش ہی نہیں ہے،انہیں تو اب یہ فکر ہے کہ کسی طرح کھاد مل جائے چاہئے اس میں ٹوکن موجود نہ ہو، اگر ہے بھی تو وہ بیشک کیش نہ ہوکھاد کے اس بحران کا فائدہ اٹھا کر اربوں روپے مالیت کے ٹوکن کیش کرائے جاچکے ہیں، کسانوں نے وزیراعظم عمران خان سے مطالبہ کیا ہے اس سکینڈل کے حقیقی کرداروں کو بینقاب کرنے کیلئے انکوائری کمیشن مقرر کریں جو اس اربوں روپے کی سبسڈی فراڈ میں ملوث اداروں و افراد کو سامنے لائے۔کوٹ سبزل کے نواحی علاقہ سنجرپور میں اسسٹنٹ ڈائریکٹر زراعت صادق آباد ظہور سلطان کا اچانک دورہ کھاد کی دوکانوں کا ریکارڈ چیک کیا گیا متعدد دکانداروں کو کھاد مہنگی بیچنے پر جرمانے بھی عائد کئے گئے اسسٹنٹ ڈائریکٹر زراعت توسیع صادق آباد ظہور احمد سلطان نے کہا کہ کھادوں کی بلائیک میں فروخت ہرگز قبول نہیں ذخیرہ اندوزوں کے خلاف سختی سے نمٹنے کے لئے پروگرام ترتیب دے رہے ہیں ذخیرہ اندوز رضاکارانہ طور پر اپنی اشیا کھادیں سیڈ وغیرہ مارکیٹ میں عام کر دیں ورنہ آہنی طریقوں سے نمٹا جائے گا اس موقع پر فیلڈ اسسٹنٹ صوفی بشیر احمد اور دیگر بھی موجود تھے۔

کھاد

مزید :

ملتان صفحہ آخر -