ای چالانوں کیخلاف سول کورٹ میں دائردعویٰ پر وکلاء حتمی بحث کیلئے طلب

ای چالانوں کیخلاف سول کورٹ میں دائردعویٰ پر وکلاء حتمی بحث کیلئے طلب

  

لاہور(نامہ نگار)سینئر سول جج شکیل احمد گورائیہ نے ای چالانوں کیخلاف سول کورٹ میں دائردعویٰ پرآئندہ سماعت پر فریقین کے وکلاء کو حتمی بحث کیلئے طلب کرلیا شہری محمد انیس نے 12ای چالان ہونے پرعدالت سے رجوع کررکھا ہے دوران سماعت عدالتی حکم پرایس پی ٹریفک لاہور نے جواب داخل کرادیاگیا ایس پی ٹریفک کی جانب سے جواب میں کہا گیاہے کہ ٹریفک کی خلاف ورزی کرنیوالوں کو ہی ای چالان بھجوائے جاتے ہیں دعویٰ ناقابل سماعت ہے اسے مسترد کیاجائے درخواست گزار کاموقف ہے کہ پولیس ٹریفک کنٹرول کرنے کی بجائے قانونی جواز کے بغیر ای چالان کررہی ہے، ای چالان بھجوانے سے پہلے وارننگ نوٹس نہ بھجوایاجانا قانون کی خلاف ورزی ہیٹریفک سگنل کی سبز، پیلی اورسرخ بتی کیبند اورکھلنے کاوقت یکساں نہیں جوچالان کاسبب ہیں،جرمانے کی 5600کی رقم کو بھی کالعدم قرار دیا جائے۔

، آئین کے آرٹیکل 10(اے)کے تحت شفاف ٹرائل ہر شہری کا بنیادی حق  ہے،ٹریفک اشاروں پر موجود بھکاریوں سے ٹریفک کاخلل پیدا ہوتا ہے یکدم بریک نہیں لگائی جاسکتی،یکدم بریک نہ لگانے سے ای چالان بھیج دیا جاتا ہے۔ 

مزید :

علاقائی -