خواجہ وس فیڈر سے بجلی کی سپلائی منقطع،علاقہ میں تاریکی

  خواجہ وس فیڈر سے بجلی کی سپلائی منقطع،علاقہ میں تاریکی

  

شبقدر(تحصیل رپورٹر)  خواجہ وس فیڈر پر بجلی گزشتہ کئی ہفتوں سے مکمل طورپر بند۔ عوام تاریکی میں زندگی گزارنے پر مجبور۔ پانی ناپید، نمازی تاریکی میں نماز ادا کرنے پر مجبور۔ حکومتی منتخب نمائندے نے معنی خیز خاموشی اختیار کرکے عوام کو واپڈا کے رحم وکرم پر چھوڑدیا۔ گزشتہ سال ستمبر 2019سے25دیہات خواجہ وس سمیت چاروں فیڈر پر بجلی کی لوڈشیڈنگ کا دورانیہ 22گھنٹے کرکے مسلسل 15ماہ تک صرف 2گھنٹے بجلی دی جاتی ہے۔ جسکی وجہ سے اہل علاقہ کو کافی مشکلات درپیش ہے مگر گزشتہ 2ماہ سے واپڈا حکام نے غیر انسانی رویہ اپنا کر خواجہ وس فیڈر پر ہر روز صرف 10منٹ بجلی چالو کرکے پھر غائب کرتے ہیں اس فیڈر کے ساٹھ فیصد سے زائد آبادی کے پینے کی پانی کو سوفٹ زیادہ گہری سطح کی وجہ سے مشینوں کے ذریعے نکالا جاتا ہے مگر بجلی نہ ہونے کی وجہ سے غریب عوام سروں پر پینے کیلئے پانی لاتے ہیں۔ بجلی کی مسلسل بندش سے مساجد میں پانی ناپید، تاریکی کیوجہ سے نمازی تاریکی میں نماز ادا کرتے ہیں اس غیرانسانی اور ظالمانہ رویہ پر منتخب حکومتی نمائندہ سے مکمل چھپ کی سادھ لی ہے۔ این اے23کے منتخب ایم این اے ملک انورتاج کا آبائی گاؤں بھی اس فیڈر سے متاثر ہے اور بجلی بندش کیوجہ سے وہ اپنے دور حکومت میں بجلی جیسے بنیادی سہولت سے محروم ہے۔ 

مزید :

پشاورصفحہ آخر -