تجارت و سرمایہ کاری کیلئے نئے شعبے تلاش کرنیکی ضرورت ہے :کینیڈین ہائی کمشنر

تجارت و سرمایہ کاری کیلئے نئے شعبے تلاش کرنیکی ضرورت ہے :کینیڈین ہائی کمشنر

لاہور(کامرس رپورٹر) کینڈا کے ہائی کمشنر پیری کالڈرووڈ نے کہا ہے کہ پاکستان اور کینڈا کو تجارتی و معاشی تعلقات مزید مستحکم کرنے چاہئیں کیونکہ دونوں ممالک پوٹینشل اور وسائل سے مالامال ہیں، پاکستان ایک عظیم ملک ہے جس کا مستقبل بہت روشن ہے۔ انہوں نے ان خیالات کا اظہار لاہور چیمبر کے نائب صدر ناصر حمید خان سے لاہور چیمبر میں ملاقات کے موقع پر کیا۔ فرسٹ سیکریٹری پولیٹیکل جین الخوری اور لاہور چیمبر کے سابق صدر میاں مصباح الرحمن نے بھی اس موقع پر خطاب کیا۔ کینیڈین ہائی کمشنر نے کہا کہ دونوں ممالک کا نجی شعبہ تجارت و سرمایہ کاری اور اکنامک پارٹنرشپ کو فروغ دینے کے لیے اقدامات اٹھائے۔ نہوں نے کہا کہ تجارت و سرمایہ کاری کے لیے نئے شعبے تلاش کرنے کی ضرورت ہے کیونکہ موجودہ تجارت دوستانہ تعلقات اور پوٹینشل کی عکاس نہیں۔ انہوں نے کہا کہ اسلام آباد میں کینڈا کا سفارتخانہ پاکستانی تاجروں کو ہر ممکن مدد فراہم کرنے کو تیار ہے۔ انہوں نے کہا کہ آئل اینڈ گیس، ہائیڈرو پاور، آلٹرنیٹو انرجی اور ٹرانسپورٹ کے شعبوں میں پاکستان کینڈا کے تجربہ سے استفادہ کرسکتا ہے۔ لاہور چیمبر کے نائب صدر محمد ناصر حمید خان نے کہا کہ کینڈا اور پاکستان کے درمیان بہترین دوستانہ تعلقات ہیں جبکہ کینڈا نے ہمیشہ معاشی ترقی کے لیے پاکستان کی مدد کی ہے۔ انہوں نے کہا کہ پاکستان کینڈا کے ساتھ تجارت کو مزید فروغ دینا چاہتا ہے، یہ بات خوش آئند ہے کہ دوطرفہ تجارت کا حجم بڑھ رہا ہے لیکن ابھی بہت کچھ کرنے کی ضرورت ہے۔

انہوں نے کہا کہ سال 2013سے 2015کے درمیان دوطرفہ تجارت کا حجم 356ملین ڈالر سے بڑھ کر 657ملین ڈالر ہوگیا لیکن یہ بات تشویشناک ہے کہ پاکستان کی برآمدات میں کمی کا رحجان ہے، تجارت کو متوازن کرنے کے لیے کام کرنے کی ضرورت ہے۔ پاکستان کی کینڈا کو برآمدات میں بیڈ لینن، ہوزری آئٹمز، لیدر، پلاسٹک، چاول اور کپاس وغیرہ جبکہ درآمدات میں آئل سیڈ، خشک سبزیاں، لکڑی، آئرن ،سٹیل اور منرل فیولز شامل ہیں۔ انہوں نے کینڈین ہائی کمشنر پر زور دیا کہ وہ تجارتی حجم کو بڑھانے کے لیے تجاویز ہیں۔ اجلاس میں لاہور چیمبر کے سابق نائب صدر آفتاب احمد وہرہ، ایگزیکٹو کمیٹی ممبران ذیشان خلیل، میاں زاہد جاوید، زاہد مقصود بٹ، شاہ رخ جمال، طارق محمود، شاہد نذیر ، طاہر منظور چودھری، محمد نواز، علی حسام اصغر اور تہمینہ سعید چودھری بھی موجود تھے۔

مزید : کامرس