مقبوضہ کشمیر ، بھارتی فوج کا احتجاجی ریلیوں پر لاٹھی چارج ، درجنوں زخمی ، 100سے زائد شہری گرفتار

مقبوضہ کشمیر ، بھارتی فوج کا احتجاجی ریلیوں پر لاٹھی چارج ، درجنوں زخمی ، ...

 سری نگر ( اے این این ) مقبوضہ کشمیر میں بھارتی فوج کے نہتے کشمیریوں پر مظالم نہ رک سکے ٗ متعدد جگہوں پر تشدد آمیز جھڑپیں ٗ ایک درجن سے زائد کشمیری زخمی ٗ 100 سے زائد شہریوں کو گرفتارکرلیا گیا ٗ وادی کے مختلف علاقوں میں خواتین کی احتجاجی ریلیاں ٗ بھارتی فوج کے خلاف شدید نعرے بازی ٗ آسیہ اندرابی سمیت تمام حریت پسند رہنماؤں کو فوری رہا کرنے کا مطالبہ ٗ بھارتی فورسز اور ریاستی انتظامیہ کی حریت کانفرنس کی جانب سے بارہمولہ چلو کال ناکام بنانے کی کوشش ٗ لوگ کرفیو کی پرواہ کئے بغیر گھروں سے نکل آئے ٗ فوجی گاڑیوں پر پتھراؤ ٗ ایک درجن سے زائد اہلکار زخمی ہوگئے ٗ سکیورٹی فورسز کی جانب سے گھر گھر تلاشی کارروائیوں کا سلسلہ بھی جاری ٗ قیمتی سامان کی توڑ پھوڑ معمول بنالیا ٗ وادی کے اکثر علاقوں میں تاحال کرفیو نافذ ٗ انٹرنیٹ اور فون سروس بھی معطل ۔ تفصیلات کے مطابق شمالی کشمیر میں حریت کانفرنس کی کال پر درجنوں جلوس برآمد ہوئے جس کے دوران فورسز نے انہیں منتشر کرنے کیلئے کاروائی کی۔ضلع میں جاری ہڑتال کے بیچ فورسز اور پولیس کا گشت جاری ہے جبکہ کئی جگہوں پر لوگوں نے احتجاج کرتے ہوئے سنگبازی کی۔ نوجوانوں نے پاپہ چھن میں فورسز پر سنگبازی کی جس کے دوران فورسز نے بھی جوابی سنگبازی کی۔اس موقعہ پر کچھ وقفے کیلئے وہاں افراتفری کا ماحول پیدا ہوا جبکہ نوجوانوں نے نعرہ بازی بھی کی۔عینی شاہدین کے مطابق فورسز نے مظاہرین پر اکا دکا ٹیر گیس کے گولے بھی داغے اور بعد میں انہیں منتشر کرنے کیلئے انکا تعاقب کیا۔نمائندے نے عینی شاہدین کا حوالہ دیتے ہوئے کہا کہ اس دوران بانڈی پورہ میں سابق وزیر اور کانگریس لیڈر عثمان مجید کی سرکاری رہائش گاہ کے باہر سنگبازی کے واقعات پیش آئے جبکہ اس موقعہ پر عثمان مجید کے گھر پر بھی پتھراؤ کیا گیا۔اس دوران آجر اور کلوسہ میں ہائرسکینڈری اسکول کے نزدیک پورلیس اور فورسز کو سنگبازی کا نشانہ بناتے ہوئے سخت پتھراؤ کیا جبکہ فورسز نے جوابی سنگبازی کی۔عینی شاہدین نے بتایا کہ فورسز اور پولیس نے بھی کاروائی کرتے ہوئے نوجوانوں کو منتشر کرنے کیلئے کچھ ٹیر گیس کے گولے داغے اور نوجوانوں کو منتشر کیا۔اس دوران آلوسہ میں خواتین نے ایک جلوس بھی برآمد کیا جس کے دوران اسلام و آزادی کے حق میں نعرہ بازی کی گئی۔خواتین نے کئی اندروی علاقوں سے گزر کر مارچ برآمد کیا۔ یہ جلوس وہاں پہنچا تو وہاں فورا فورسز کی گاڑیاں نمودار ہوئی اور جلوس کو منتشر کرنے کے لئے ، آنسو گیس کا بے تحاشا استعمال کا جس کے نتیجہ میں ایک خواتین دلشادہ بیگم ٹیر گیس شل لگنے سے زخمی ہو ئی ، اور جلوس میں بھگدڈ مچ گئی اور فورسز پر نوجوانوں نے سنگ بازی شروع کر دی جس سے وہاں حالات پر تناو اورکشیدہ ہوئے۔ عینی شاہدین کا کہنا ہے کہ اس موقہ پر3خواتین پر غشی بھی طاری ہوئی۔ خواتین نے تحریک حریت کے اہتمام سے جلوس برآمد کر کے اسلام و آزادی کے حق میں نعرہ بازی کی۔جلوس سے تحریک حریت کے سنیئر لیڈر ملک دانس نے خطاب کیا۔گنڈ پورہ بانڈی پورہ میں گرفتاریوں کے خلاف شبانہ احتجاجی مظاہرے ہوئے اور اس دوران پولیس اور فورسز کے ساتھ مخاصمت کرتے ہوئے انکی کوشش کو ناکام بنا دیا۔اس دوران منگل کو بھی علاقے میں احتجاج کیا گیا اور شبانہ چھاپوں کے سلسلے پر فوری طور پر روک لگانے کا مطالبہ کیا گیا۔نائد کھے میں دوران شب فاروق احمد نامی ایک نوجوان کی گرفتاری کے بعد لوگ گھروں سے باہر آئے اور احتجاج کرنے لگے جبکہ منگل صبح بھی اس علاقے میں لوگوں نے احتجاج کرتے ہوئے شبانہ چھاپوں کے خلاف اپنی صدائیں بلند کی۔اس دوران بارہمولہ میں گزشتہ15برسوں کے دوران سب سے طویل کریک ڈاؤن کے بعد منگل کو قصبہ میں سخت تناؤ رہا جبکہ حساس علاقوں میں فورسز اور پولیس کی اضافی تعداد کو تعینات کیا گیا تھا۔

مزید : علاقائی