پنجاب اسمبلی، اپوزیشن کی ترامیم مسترد، لوکل گورنمنٹ بل سمیت چھ مختلف مسودات قانون منظور

پنجاب اسمبلی، اپوزیشن کی ترامیم مسترد، لوکل گورنمنٹ بل سمیت چھ مختلف مسودات ...

لاہور ( نمائندہ خصوصی ) پنجاب اسمبلی نے اپوزیشن کی ترامیم مسترد کرتے ہوئے لوکل گورنمنٹ بل سمیت مختلف چھ مسودات قانون منظور کرلئے ہیں جبکہ موٹر وہیکل آرڈننس کے نفاذ کی معیاد میں نوے روز کی توسیع کردی ہے۔گزشتہ روز ڈپٹی سپیکر سردار شیر علی گورچانی کی صدارت میں پنجاب اسمبلی کے اجلاس میں جو مسوادتِ قانون منظور کیے گئے ہیں ان میں لوکل گورنمنٹ ترمیمی بل ، پولٹری پروڈکشن بل ، محفوظ انتقالِ خون بل ، قیامِ امن پنجاب بل ، انفرا سٹرکچر ڈویلپمنٹ ترمیمی بل اور ذراعت ، خوراک اور ڈرگ اتھارتی ترمیمی بل شامل ہیں ، ۔ پولٹری پروڈکشن بل پر بحث کے دوران جماعت اسلامی کے پارلیمانی لیڈر ڈاکٹر سید وسیم اختر نے کہا کہ جدید سائنسی دور میں ویٹرنری سائنس برائلر کو انسانی صحت کیلئے خطر ناک قراردے رہی ہے اور جلد ہی دیسی مرغی کا وقت لوٹنے والا ہے اس لئے پولٹری پروڈکشن بل پر عوام کے ساتھ ساتھ ماہرین سے بھی مشاورت کی جائے اور برائلر کے بجائے مرغبانی کی طرف رجوع کیا جائے ، خرم جہانگیر وٹو کا کہنا تھا اس بل میں پولٹری کے چھوٹے فارمرز کو کوئی تحفظ نہیں دیا گیا جبکہ بڑی بڑی فیڈ ملوں اور چکن کا ریٹ کنٹرول کرنے والوں کو مکمل آزادی دی گئی ہے ۔ ڈاکٹر وسیم اختر نے اپوزیشن کے موقف کو درست سمجھنے کے باوجود اہمیت نہ دینے پر ایوان سے واک آؤٹ بھی کیا ۔ اس سے پہلے اجلاس کے آغاز میں حکومتی رکن عامر شاہ نے پوائنٹ آف آرڈر پر بات کرتے ہوئے شکوہ کیا کہ رحیم یار خان میں تینتیس افراد ٹریفک حادثے میں جاں بحق ہوگئے لیکن کسی حکو متی شخص نے کوئی اشک شوئی نہیں کی جبکہ لاہور میں چھوٹا سا واقع رونما ہونے پر بھی وزیراعلیٰ خود پہنچ جاتے ہیں حکومت کے کسی ذمہ دار کے بجائے جنوبی پنجاب سے تعلق رکھنے والے حکومتی رکن اعجاز شفیع نے ایوان کو بتایا کہ ریسیکیو کے ڈی جی اپنے عملے کے ساتھ جائے وقعہ پر پہنچ گئے ہیں جو اس کی تحقیقات کررہے ہیں اور اس کی رپورٹ بھی ایوان میں پیش کی جائے گی ۔

پنجاب اسمبلی

مزید : صفحہ آخر