حکومت درآمدی اشیا پر ریگولیٹری ڈیوٹی کے نفاذ پر نظرثانی کرے، راولپنڈی چیمبر

حکومت درآمدی اشیا پر ریگولیٹری ڈیوٹی کے نفاذ پر نظرثانی کرے، راولپنڈی چیمبر

راولپنڈی (کامرس ڈیسک)حکومت درآمدی اشیا پر ریگولیٹری ڈیوٹی کے نفاذ پر نظرثانی کرے 300کے قریب درآمدی اشیا پر ریگولیٹری ڈیوٹی میں اضافے سے اسمگلنگ میں اضافہ ہو گا ان خیالات کا اظہار راولپنڈی چیمبر آف کامرس اینڈ انڈسٹری کے صدر زاہد لطیف خان نے راولپنڈی چیمبر میں تاجروں کے ایک وفد سے ملاقات میں کیا انہوں نے کہا کہ ریگولیٹری ڈیوٹی میں اضافہ منی بجٹ کے مترادف ہے ، حکومت اسمگلنگ روکنے کے لیے موثر اقدامات کرے حکومت کی جانب سے یہ اقدام دانشمندانہ نہیں ہے انہوں نے کہا کہ متعلقہ اسٹیک ہولڈرز اور چیمبرز آف کامرس کو اعتماد میں نہیں لیا گیا

تجارتی خسارہ کم کرنے کے لیے لگژری اشیا پرڈیوٹی میں اضافہ کیا گیا ہے لیکن دیکھنے میں آیا ہے کہ ضروری اشیا خاص طور پر سرجیکل آئٹمز، ہسپتالوں، لیب میں استعمال ہونے والے دستانوں، بوڑھے مریضوں کے لیے ڈایئپرز اور ادویات کی تیاری میں استعمال ہونے والے کیمیکلز اورخام مال کی درآمد پر بھی ڈیوٹی میں اضافہ کیا گیا ہے اس کے ساتھ ساتھ پھلوں اور سبزیوں سمیت کھانے پینے کی اشیا پر پچاس فی صد تک ڈیوٹی میں اضافہ عام آدمی کے لیے مزید مشکلات پیدا کرے ۔گا۔

زاہد لطیف خان نے کہا کہ حکومت کو چایئے کہ برآمدات میں اضافے کے لیے کاروباری لاگت میں کمی لائے اور صنعتوں کو سستی بجلی فراہم کرے تاکہ مقامی صنعت کو فروغ ملے انہوں نے کہا کہ ڈیوٹی بڑھنے سے اسمگلنگ میں مزید اضافہ ہو گا ، حکومت غیر روایتی شعبوں میں سرمایا کاری کرے

مزید : کامرس