’جو مرد جنسی عمل کے دوران یہ شرمناک کام کرتے ہیں انہیں دماغ کا کینسر ہونے کا خطرہ بہت زیادہ ہوتا ہے‘ سائنسدانوں نے سخت ترین وارننگ دے دی

’جو مرد جنسی عمل کے دوران یہ شرمناک کام کرتے ہیں انہیں دماغ کا کینسر ہونے کا ...
’جو مرد جنسی عمل کے دوران یہ شرمناک کام کرتے ہیں انہیں دماغ کا کینسر ہونے کا خطرہ بہت زیادہ ہوتا ہے‘ سائنسدانوں نے سخت ترین وارننگ دے دی

  

نیویارک(مانیٹرنگ ڈیسک) انٹرنیٹ پر فحش فلموں کی بھرمار نے دیگر خباثتوں کے ساتھ ساتھ جنسی عمل کے کچھ ایسے شرمناک غیرفطری طریقوں کو بھی رواج دے دیا ہے کہ جانور بھی ایسی خباثتوں کے مرتکب نہیں ہوتے۔ انہی میں ایک جنسی عمل کے لیے منہ کا استعمال بھی ہے۔ اب جنسی عمل کے اس طریقے کے متعلق سائنسدانوں نے ایسا خطرناک انکشاف کر دیا ہے کہ شاید جان کر بے راہرو لوگ اس سے تائب ہو جائیں۔ امریکہ کی جانز ہاپکنز یونیورسٹی کے سائنسدانوں کا کہنا ہے کہ ”جو مرد جنسی عمل میں منہ کا استعمال کرتے ہیں انہیں دماغ اور گردن کا کینسر لاحق ہونے کے امکانات کئی گنا بڑھ جاتے ہیں۔ اس کے برعکس جنسی طور پر متحرک خواتین میں اس کے منفی اثرات قدرے کم پائے جاتے ہیں۔“

کیا جنسی تعلق کے ذریعے منتقل ہونے والی بیماریاں عوامی ٹوائلٹ سے بھی آپ کو لگ سکتی ہیں؟ ان سے کیسے بچا جاسکتا ہے؟ آپ بھی جانئے اور محفوظ رہیے

سائنسدانوں نے تحقیقاتی رپورٹ میں مزید بتایا ہے کہ ”جو مرد سگریٹ نوشی کرتے ہیں اور اس کے ساتھ جنسی عمل کا یہ شرمناک طریقہ بھی اپناتے ہیں ان میں ایچ پی وی نامی کینسر میں مبتلا ہونے کا خطرہ سب سے زیادہ ہوتا ہے اور ایسے مردوں کو ایچ پی وی سے بچاﺅ کی ویکسین دینا لازمی ہو جاتا ہے۔“ رپورٹ کے مطابق اس تحقیق میں سائنسدانوں نے نیشنل ہیلتھ اینڈ نیوٹریشن ایگزامینیشن سروے سے 20سے 69سال عمر کے 13ہزار 89افراد کا طبی ڈیٹا کا حاصل کیا اور ان کو لاحق امراض اور ان کی جنسی عادات سے اس کا تجزیہ کرکے نتائج مرتب کیے، جن کے مطابق ان مردوں میں ایچ پی وی کینسر کا خطرہ سب سے کم تھا جو نہ سگریٹ نوشی کرتے تھے اور نہ جنسی عمل میں منہ کا استعمال، جبکہ ان مردوں میں سب سے زیادہ تھا جو یہ دونوں کام کرتے تھے۔

مزید : ڈیلی بائیٹس