راولپنڈی:خاتون سرکاری افسرکا خاوند کے ساتھ ملکر 11سالہ گھریلو ملازمہ پر تشدد،انسانی حقوق کی وزیر نے نوٹس لے لیا

راولپنڈی:خاتون سرکاری افسرکا خاوند کے ساتھ ملکر 11سالہ گھریلو ملازمہ پر ...
راولپنڈی:خاتون سرکاری افسرکا خاوند کے ساتھ ملکر 11سالہ گھریلو ملازمہ پر تشدد،انسانی حقوق کی وزیر نے نوٹس لے لیا

  

راولپنڈی(ڈیلی پاکستان آن لائن)  خاتون سرکاری افسر اور اس کے خاوند کی جانب سے 11 سالہ گھریلو ملازمہ پر تشدد کی ویڈیو وائرل ہونے کے بعد وفاقی وزیر برائے انسانی حقوق شیریں مزاری نے واقعے کا نوٹس لے لیا۔

جیو نیوز کے مطابق راولپنڈی کی ولایت کالونی میں سرکاری خاتون افسر اور اس کے خاوند کی جانب سے 11 سالہ گھریلو ملازمہ پر مبینہ طور پر تشدد کیا گیا۔گھریلو کمسن ملازمہ کو تشویشناک حالت میں والد کے حوالےکیا گیا جو اپنی بیٹی کو لے کر آبائی علاقے سمندری واپس چلا گیا۔گھریلو ملازمہ پر تشدد کی ویڈیو وائرل ہونے کے بعد پولیس اور دیگر ادارے حرکت میں آ گئے۔سی پی او راولپنڈی عباس احسن نے واقعے کا نوٹس لیتے ہوئے تشدد کرنے والے میاں بیوی کے خلاف کارروائی نہ کرنے پر اے ایس آئی کو معطل کر دیا۔

سی پی او عباس احسن نے بچی اور اس کے والد کو واپس لانےکے لیے ٹیم سمندری بھیج دی۔پولیس حکام کا کہنا ہے کہ بچی پر تشدد ثابت ہونے پر میاں بیوی کے خلاف کارروائی ہو گی۔وفاقی وزیر برائے انسانی حقوق شیریں مزاری نے سوشل میڈیا پر اس حوالے سے ٹوئٹ کیا کہ بچی کے والد نے ابتدائی طور پر بچی پر تشدد سے انکار کیا لیکن بچی پر تشدد کے معاملے کو دیکھ رہےہیں۔متاثرہ بچی نے سوشل میڈیا پر وائرل ہونے والی ویڈیو میں بتایا ہے کہ میری مالکن اور مالک مجھ بیلٹ اور رسی سے مارتے تھے اور رات کو سونے بھی نہیں دیتے تھے۔

 

ویڈیو دیکھیں

مزید :

قومی -