29اکتوبر سے قبل با مقصد مذاکرات کے لئے دزوازے کھلے ہیں انجمن تاجران

29اکتوبر سے قبل با مقصد مذاکرات کے لئے دزوازے کھلے ہیں انجمن تاجران

  IOS Dailypakistan app Android Dailypakistan app

 لاہور(لیڈی رپورٹر)آل پاکستان انجمن تاجران کے صدر اشرف بھٹی نے کہا ہے کہ اگرحکومت شٹر ڈاؤن ہڑتال کیلئے دی جانے والی تاریخ سے قبل لالی پا پ دینے کی بجائے بامقصدمذاکرات کرے تو بات چیت کے دروازے کھلے ہیں،موجودہ حالات میں کاروبارچلانامحال ہوگیا ہے اور تاجروں کے پاس سوائے ہڑتال پر جانے کے کوئی آپشن باقی نہیں بچا،اپنے جائز مطالبات منوانے کیلئے ملک بھر کے تمام تاجر متحد ہیں۔ ان خیالات کا اظہار انہوں نے 29اور30ٍٍٍٍٍٍٍٍٍٍٍٍٍٍٍاکتوبر کی دی جانے والی ملک گیر شٹر ڈاؤن ہڑتال کو کامیاب بنانے کیلئے مختلف مارکیٹوں کے عہدیداروں سے رابطے کے دوران گفتگوکرتے ہوئے کیا۔ اشرف بھٹی نے کہا کہ فیڈرل بورڈآف ریو نیو تاجروں کو شک کی نگاہ سے دیکھنے کی دیرینہ پالیسی کوترک کرے کیونکہ اس کے بغیر مذاکرات کو نتیجہ خیزنہیں بنایا جاسکتا۔ حکومت کی ناقص پالیسیوں، مہنگائی اور خوف و ہراس کی فضاء کی وجہ سے مارکیٹوں میں کاروبارنہ ہونے کے برابر رہ گیا ہے اورتاجراپنی دکانیں مالکان کو واپس کر رہے ہیں۔سرمایہ کاروں نے اپناکروڑوں روپے کا سرمایہ نکال لیا ہے جس سے مارکیٹوں میں معاشی سر گرمیاں منجمدہیں۔ اشرف بھٹی نے کہا کہ تاجروں نے کبھی بھی ٹیکس دینے سے انکار نہیں کیا لیکن ہم ایف بی آر کی خواہشات کے مطابق بوجھ نہیں اٹھا سکتے،فکس ٹیکس اور شناختی کارڈ کی شرط پرنتیجہ خیزمذاکرات کیبغیر شٹر ڈاؤن ہڑتال کی کال واپس نہیں لی جائے گی اور تاجراپنے مطالبات منوانے کے لئے ہر طرح کی قربانی دینے کے لئے تیار ہیں۔