کیپٹن صفدر کی گرفتاری پر ضیاء الحق کی یاد تازہ ہو گئی: رضا ربانی

کیپٹن صفدر کی گرفتاری پر ضیاء الحق کی یاد تازہ ہو گئی: رضا ربانی

  

  اسلام آباد (آن لائن) سینیٹر اعظم سواتی نے کہا ہے کہ ہم دفاعی اداروں کے ساتھ کھڑے ہیں ملک سے باہر بیٹھ کر تقریر کرنے والے غدار ہیں، قائداعظم کی قبر پر فحش الفاظ استعمال کئے گئے، اینٹ کا جواب پتھر سے دیا جائے گاہمیں حقائق کو نہیں بدلنا چاہئے چور جہاں مرضی چلے جائیں، ذلیل و رسوا ہوں گے۔ چیئرمین سینیٹ سینیٹر صادق سنجرانی کی زیر صدارت سینیٹ اجلاس میں اعظم سواتی نے کہا کہ قائد عظم کے مزار پر جیسے غداری کے نعرے لگائے گئے افسوسناک ہے آج قائداعظم کی قبر پر فحش الفاظ استعمال کئے گئے قانون کے مطابق اگر سندھ حکومت نے قانون کی عملداری کی۔ ہم دفاعی اداروں کے ساتھ کھڑے ہیں۔ میاں رضا ربانی نے کہا کہ اپوزیشن کی تحریک آئین و قانون کے دائرے میں ہے۔ کیپٹن صفدر کی گرفتاری اور پولیس ایکشن نے ضیا الحق کی یاد تازہ کرا دی۔ جس روش پر ملک کو لیکر جا رہے ہیں اسکا جواب تاریخ دے گی۔وزیر اعظم کہتا ہے میں جمہوریت ہوں یہ فاشزم کی بد ترین مثال ہے۔ ٹائیگر فورس ملک کے اندر ایک بڑا مافیا بنایا جا رہا ہے ر جو دہشت گردی اور انتشار کو جنم دے گا یہ ٹائیگر فورس موسولینی اور ہٹلر نے بھی بنائی تھیں۔پی ٹی آئی نے ملک کو دو لخت کرنے کے لئے کام کررہی ہے۔ فیصل جاوید کو مخاطب کرتے ہوئے میاں رضا ربانی نے کہا کہ یہ ایوان میں بیٹھے بچے کیا جواب دیں گے یہ ٹائیگر فورس موسولینی اور ہٹلر نے بھی بنائی تھیں اس کا نتیجہ غلط نکلے گا۔سینیٹر محسن عزیز نے کہا کہ دنیا کے سو کرپٹ لوگون میں دسویں نمبر پر آنے والے میاں نواز شریف ہیں۔ اپوزیشن فوج پر تنقید کر کے ملک کی جڑوں کو کھوکھلا کرنے کیساتھ کشمیر کاز پر مضبوط موقف کو کمزور کرنے کی گھناؤ نی سازش میں ملوث ہے۔ والدین کی قبروں پر جا کر اچھل کود کرنے والے کونسی روایات کی بات کر رہے ہیں۔ یہاں ضیاء الحق کی بات کی جاتی ہے مگر یہ جواب دیں کہ ضیاء الحق کے پہلو میں کون بیٹھا تھا۔ گرفتار شخص پوسٹر بنانے والا اور ڈرائیور تھا اس کے لئے ہنگامہ کیوں کیا جا رہا ہے، اپوزیشن والوں کے لئے سوچنے کا مقام ہے کہ باجوا ہ کو ووٹ کس نے دیا تھا۔ سینیٹر فیصل جاوید نے کہا کہ پیپلز پارٹی اور ن لیگ نے کرپشن چارٹر آف ریمانڈ لکھ کر بھیجا کہا گیا ہمارے مطالبات مانو تو ہم تحریک نہیں چلائیں گے، عمران خان نے انکار کر دیا۔قانون کی بالا دستی ہو تو یہ سب جیلوں میں ہوں، لوگوں کو ویگنیں بھر بھر کر لایاگیا۔کراچی جلسہ میں لوگ بتیاں دیکھنے آئے تھے۔ بچہ بچہ کہنے والو بچہ تو آپکا لیڈر ہے۔ اجلاس کے دوران وزیر مملکت برائے پارلیمانی امور سینیٹرعلی محمد خان نے جواب دیتے ہوئے کہا کہ سرکاری ملازمین کے جائز مطالبات جلد حل کر دئیے جائیں گے، غیر ذمہ دارانہ رویوں پر فارغ کئے گئے ملازمین کو موقع پر بحال نہیں کیا جا سکتا، اس لئے مظاہرہ ختم نہیں کیا جا رہا ۔ لیڈی ہیلتھ ورکرز کے کچھ مطالبات عدالتوں میں زیرسماعت ہیں،مس کنڈکٹ کرنے والوں کو مظاہرے میں بحال کرنامشکل ہے۔

سینٹ

مزید :

صفحہ آخر -