کرپشن کیسوں کو منطقی انجام تک پہنچائینگے، اپوزیشن کو اب کوئی رعایت نہیں ملے گی: عمران خان، مہنگائی پر قابو پانے کے لئے سہولت بازا ر لگانے کافیصلہ

کرپشن کیسوں کو منطقی انجام تک پہنچائینگے، اپوزیشن کو اب کوئی رعایت نہیں ملے ...

  

اسلام آباد(سٹاف رپورٹر، مانیٹرنگ ڈیسک، نیوز ایجنسیاں) وزیراعظم عمران خان کی زیر صدارت وفاقی وزراء کا اجلاس ہوا جس میں ملکی سیاسی صورت حال پر غور کیا گیا۔اجلاس سے خطاب میں وزیراعظم عمران خان نے کہا کہ حکومت کسی قسم کی بلیک میلنگ میں نہیں آئے گی، کرپشن کیسز کو ہر صورت منطقی انجام تک پہنچایا جائے گا۔وزیراعظم عمران خان نے کہا کہ اپوزیشن کو  اب کسی قسم کی رعایت نہیں ملے گی، اپوزیشن کے اداروں کے خلاف بیانیے پر بھرپور جواب دیا جائے گا۔وزیراعظم نے ہدایات جاری کیں کہ قانون کی خلاف ورزی کرنے والوں  کے ساتھ سختی سے نمٹا جائے۔ وزیراعظم عمران خان نے کہا  کہ ماحولیاتی تحفظ کیلئے کام کرنے والے رضاکار ہمارے ہیرو ہیں، جزا اور سزا کے نظام سے ہی معاشرے ترقی کرتے ہیں، کلین اینڈ گرین پروگرام میں نمایاں کارکردگی دکھانے والے ڈپٹی کمشنرز کو مراعات جبکہ ناقص کارکردگی والوں کو سزائیں دیں گے۔ پیر کے روز کلین اینڈ گرین انڈیکس ایوارڈ دینے کی تقریب سے خطاب کرتے ہوئے وزیراعظم عمران خان نے کہا کہ ملک امین اسلم اور زرتاج گل سمیت ماحولیاتی تبدیلی کی وزارت کے تمام حکام کو مبارکباد دیتاہوں۔ انہوں نے کہا کہ پاکستانی نوجوانوں میں رضاکارانہ خدمات کا بہت جذبہ ہے۔ پاکستان وہ خوش قسمت ملک ہے جہاں رفاہ عامہ کے کاموں میں بھرپور حصہ لیا جاتا ہے۔ شوکت خانم ہسپتال کی تعمیر کے دوران قوم کے جذبے سے بہت متاثر ہوا۔ وزیراعظم نے کہا کہ بدقسمتی سے پاکستانی عوام کے جذبے سے بھرپور فائدہ نہیں اٹھایا جاتا رہا۔ قدرت نے پاکستان کو نعمتوں اور وسائل سے مالا مال کیا ہے لیکن ہم نے اپنی آنکھوں کے سامنے جنگلات تباہ ہوتے دیکھے ہیں۔ ماضی میں پشاور کو پھولوں کو شہر کہا جاتا تھا۔ تبدیلی لانے کے لئے سب سے پہلے ارادہ اور پھر منصبوہ بندی ضروری ہوتی ہے۔ کراچی کو روشنیوں کا شہر کہا جاتا تھا جہاں اب گندگی کے ڈھیر لگے ہوئے ہیں۔ انہوں نے کہا کہ گزشتہ 20سالوں کے دوران لاہور سے 70فیصد درخت کاٹ دئیے گئے ہیں۔ درخت ہمیں آکسیجن فراہم کرتے اور آلودگی کم کرنے میں مدد دیتے ہیں۔ عمران خان نے کہا کہ کورونا وباء کے خلاف موجودہ حکومت کی کامیابی کو عالمی سطح پر سراہا گیا ہے۔ پاکستان کے مقابلے میں بھارت میں کورونا کے باعث بہت زیادہ نقصان ہوا ہے۔ ہمیں آئندہ نسلوں کے مستقبل کو بچانے کیلئے فوری اقدامات کی ضرورت ہے۔ ماحولیاتی تحفظ کے حوالے سے سب سے پہلے لوگوں میں شعور بیدار کرنا ہے۔۔ وزیراؑعظم عمران خان نے کہا کہ آلودگی اور گندگی کے باعث بے شمار بیماریاں جنم لیتی ہیں گندگی دریاؤں میں ڈالی جارہی ہے۔ انہوں نے کہاکہ عوام کورونا سے بچاؤ کی احتیاچی تدابیر جاری رکھیں۔ آئندہ دو ماہ کے دوران کورونا وبا میں دوبارہ تیزی آ سکتی ہے۔۔ انہوں نے کہا کہ کراچی شہر کی ساری گندگی سمندر میں ڈالی جاری ہے، ہر شاہراہ پر کچرا موجود ہے۔انہوں نے کہا کہ یہ وقت ہے کہ انتظامیہ اور عوام مل کر شجر کاری پر توجہ دیں تاکہ آنے والی نسلوں کو سازگار ماحول فراہم کیا جاسکے۔انہوں نے کہا کہ اللہ کی نعمتوں کی قدر نہ کرکے ہم ماحولیاتی تباہی کے دھانے پر پہنچ چکے ہیں۔وزیر اعظم عمران خان مہنگائی کا توڑ نکالنے کیلئے خود متحرک ہوگئے اور اشیائے ضروریہ کی قیمتوں کے حوالے سے اجلاس میں اہم فیصلے کرلیے ہیں۔وزیرِ اعظم عمران خان کی زیر صدارت اشیائے ضروریہ کی قیمتوں کے حوالے سے اجلاس ہوا جس میں عام شہریوں کو ریلیف کی فراہمی اور مہنگائی میں کمی کیلئے بڑے فیصلے کیے گئے۔ حکومت نے پنجاب بھر میں ایک ماہ کے اندر 350 سہولت بازار لگانے کا فیصلہ کیا ہے، رواں ہفتے پنجاب بھر میں 195 سہولت بازار لگائے جائیں گے جن میں سے لاہور میں رواں ہفتے 31 سہولت بازار لگائے جائیں گے۔ سہولت بازار میں 20 کلو آٹے کا تھیلا 845 روپے اور 10 کلو آٹا 410 روپے میں فروخت ہوگا، سہولت بازار میں چینی فی کلوگرام 85 روپے میں فروخت ہوگی۔اجلاس میں گندم اور چینی کی دستیابی اور قیمتوں کے حوالے سے بھی جائزہ لیا گیا۔ اجلاس کو بتایا گیا کہ پنجاب اور خیبر پختونخوا میں ذخیرہ اندوزوں کے خلاف کریک ڈاؤن کیا گیا، جرمانے، سزائیں، مقدمات اور دکانیں سیل کرنے کے اقدامات کیے گئے۔اجلاس کو بتایا گیا کہ پنجاب کے شہر وہاڑی سے ذخیرہ کی گئی 475 ٹن چینی پکڑی گئی اور وہاڑی سے ہی ذخیرہ کیا گیا 30 ہزار کلو گھی بھی پکڑا گیا، وہاڑی میں ذخیرہ اندوزی کرنے کے جرم میں محمد صدیق ولد تاج دین کو گرفتار کیاگیا۔خیبر پختونختوا حکومت نے ایک ہفتے میں مختلف دکانوں پر 27 ہزار چھاپے مارے، 818 مقدمات درج اور  759 دکانیں سیل کردی گئیں۔103 دکانداروں کو سزا دی گئی اور 6 ہزار سے زائد دکانداروں کو انتباہ جاری کیا گیا۔ اس دوران وزیراعظم نے حکم دیا کہ ذخیرہ اندوزی کرنے والے مالکان کو گرفتار کیا جائے۔، اجلاس کو بتایا گیا کہ حکومت پنجاب کی جانب سے گندم کی سرکاری ریلیز سولہ ہزار  ٹن یومیہ سے بڑھا کر بیس ہزار ٹن یومیہ کر دی گئی ہے۔ آئندہ ایک دو روز میں اسے  پچیس ہزار ٹن یومیہ کیا جا رہا ہے۔ چیف سیکرٹری سندھ نے بتایا کہ سندھ حکومت کی جانب سے گندم کی باقاعدہ  ریلیز کا عمل آئندہ ایک دو روز میں  شروع ہو جائے گا۔  سولہ سے اکتیس اکتوبر کے لئے پچاسی ہزار ٹن گندم مختص کر لی گئی ہے جس کے لئے چالان جمع کرائے جا رہے ہیں۔چیف سیکرٹری پنجاب نے بتایا کہ فلور ملوں کو اس امر کا پابند بنایا گیا ہے کہ وہ گندم زیادہ دیر تک ملوں میں ذخیرہ نہ کر یں اور آٹے کی فوری ریلیز یقینی بنائیں۔ 

عمران خان

مزید :

صفحہ اول -