پوپ فرانسس مذہبی آزادی کیلئے چین پر دباؤ ڈالیں: امریکی سینیٹرز

      پوپ فرانسس مذہبی آزادی کیلئے چین پر دباؤ ڈالیں: امریکی سینیٹرز

  

 واشنگٹن (اظہر زمان، بیوروچیف) امریکہ کی دونوں پارٹیوں سے تعلق رکھنے والے دو سینیٹرز نے پوپ فرانسس پر زور دیا ہے کہ وہ چین سے مطالبہ  کریں کہ وہاں بلاامتیاز مذہبی آزادیوں کو بحال کیا جائے۔ انہوں نے ایک مشترکہ خط پوپ کے نام ایک ایسے وقت لکھا ہے جب وہ چینی کیمونسٹ پارٹی کے ساتھ چین میں تمام بشپ کی تعیناتی کے سمجھوتے کا از سر نو جائزہ لینے کیلئے ان کیساتھ بات چیت کا آغاز کر رہے ہیں۔ ری پبلکشن سینٹر ٹوڈینگ اور ڈیمو کریٹک سینٹر ٹیم کین نے اپنے خط میں نشان دہی کی ہے کہ چین کے شمال مغربی صوبے سنکیانگ میں اقلیتی مسلم کمیونٹی اویغور شدید دباؤ کاشکار ہیں جن کی دادرسی بہت ضروری ہے۔ اس خط کے ذریعے امریکی وزارت ضارجہ کی اس رپورٹ کی حمایت کی گئی ہے جس میں اس مسلم کمیونٹی کو عقائد تبدیل کرنے پر مجبور کرنے کی مزمت کی گئی تھی۔ رپورٹ کے مطاب اویغور باشندوں سے ٹیکسائل انڈسٹری میں جبری مشقت بھی لی جارہی ہے۔ صدر ٹرمپ نے بھی رواں سال میں ایک قانون پر دستخط کئے تھے جس کے تحت ایسے حکام پر پابندیاں عائد ہوسکتی ہیں جو اویغور اقلیت پر جبر کے ذمہ دار پائے جائیں گے۔ امریکی وزیر خارجہ مائیک پومپیو نے بھی گزشتہ ماہ پوپ پرزور دیا تھا کہ وہ ان حکومت کے خلاف مہم تیز کریں جو مذہبی آزادیوں سے اپنے عوام کو محروم رکھ رہے ہیں۔

پوپ فرانسس

مزید :

صفحہ اول -