دن کہاں اب وہ مزے داری کے دن| کاشف حسین غائر |

دن کہاں اب وہ مزے داری کے دن| کاشف حسین غائر |
دن کہاں اب وہ مزے داری کے دن| کاشف حسین غائر |

  

دن کہاں اب وہ مزے داری کے دن

کاٹتا ہوں گھر میں بے کاری کے دن

کس لیے یہ خواہشِ ترکِ سفر

اور وہ بھی عین تیاری کے دن

اب تو کاٹے سے نہیں کٹتا ہے وقت

کیا ہوئے وہ تیز رفتاری کے دن

میں تو آوازوں میں بٹ کر رہ گیا

خوش کہاں آئے صدا کاری کے دن

سوچتے ہیں دن ہی کتنے رہ گئے

یہ ہماری ناز برداری کے دن

شاعر: کاشف حسین غائر 

( کاشف حسین غائر کی وال سے)

Din   Kahan   Ab   Wo   Mazay   Daari   K   Din

Kaat'ta   Hun   Ghar   Men   Be Kaari   K   Din

 Kiss   Liay   Yeh   Khaahish-e-Tark-e-Safar

Aor    Wo   Bhi   Ain  Tayyaari   K   Din

 Ab   To   Kaatay   Say   Nahen   Kat'ta   Hay Waqt

Kaya   Huay   Wo    Taiz   Raftaari   K   Din

 Main   To   Aawaazon   Men   Batt   Kar   Reh   Gaya

Khush   Kahan   Aaey   Sadaa   Kaari   K   Din

 Sochtay   Hen   Din   Hi   Kitnay   Reh   Gaey

Yeh   Mahaari   Naaz   Bardaari   K   Din

 Poet: Kashif    Hussain   Ghayer 

مزید :

شاعری -رومانوی شاعری -غمگین شاعری -