دل نے چاہا تھا کہ ہو آبلہ پائی رخصت| کشور ناہید|

دل نے چاہا تھا کہ ہو آبلہ پائی رخصت| کشور ناہید|
دل نے چاہا تھا کہ ہو آبلہ پائی رخصت| کشور ناہید|

  

دل نے چاہا تھا کہ ہو آبلہ پائی رخصت

زندگی دے کے ہوئی شعلہ فشانی رخصت

تم نے جب شمع بجھائی تو سمجھ میں آیا

ایک موہوم سا رشتہ تھا سو وہ بھی رخصت

میں اداسی سرِ بازار بھی لاؤں ایسے

جیسے پانی کی تمنا میں ہو کشتی رخصت

تیری تائید کی تصویر سے جی اٹھے تھے

نہیں معلوم تھا ،یہ ریت ہے، پانی رخصت

میں حوالہ تِری تحریر کا کس نام سے دوں

مجھ سے تو مانگ چکا حرفِ تعلی رخصت 

شاعرہ: کشور ناہید

 ( شعری مجموعہ:آباد خرابہ؛سالِ اشاعت،2016)

Dil   Nay   Chaaha   Tha   Keh   Ho   Aabla   Paai    Rukhsat

Zindagi   Day  K   Hui   Shola   Fashaani    Rukhsat

 Tum   Nay   Jab   Shama   Bujhaai  To   Samjh   Men   Aaya

Aik   Mohoom   Sa   Rishta   Tha   So   Wo    Bhi    Rukhsat

 Main   Udaasi   Sar-e-Bazaar   Bhi   Laaun   Aisay

Jaisay   Paani   Ki   Tamanna   Men   Ho   Kashti    Rukhsat

 Teri   Taeed   Ki   Tasveer   Say   Ji   Uthay  Thay

Nahen   Maloom   Tha   Yeh   Rait   Hay   Paani    Rukhsat

 Main   Hawaala   Tiri   Tehreer   Ka   Kiss   Naam   Say  Dun

Mujh   Say   To   Maang   Chuka   Harf-e-Taali    Rukhsat

 Poetess: Kishwar   Naheed

 

مزید :

شاعری -رومانوی شاعری -غمگین شاعری -