ہم نے کہنے کو تمہیں دل سے بھلایا ہوا ہے|کشور ناہید|

ہم نے کہنے کو تمہیں دل سے بھلایا ہوا ہے|کشور ناہید|
ہم نے کہنے کو تمہیں دل سے بھلایا ہوا ہے|کشور ناہید|

  

ہم نے کہنے کو تمہیں دل سے بھلایا ہوا ہے

بس یہی داغ ہے، سینے میں چھپایا ہوا ہے

بات کرنے کو بہت دیر سے سوچا، اس سے

جس کی تحریر کو آنکھوں میں بسایا ہوا ہے

اب گرے گی بھی تو کیسے کہ بہت صبر کے ساتھ

ہم نے دیوار کو ہاتھوں سے بنایا ہوا ہے

کوئی کہتا ہے رفاقت نہیں ملنے والی

کوئی کہتا ہے وہ دہلیز پہ آیا ہوا ہے

وصل کی شام کا اندازہ بہت مشکل تھا

ہم نے پوچھا تھا مگر اس نے چھپایا ہوا ہے

شاعرہ: کشور ناہید

 ( شعری مجموعہ:آباد خرابہ؛سالِ اشاعت،2016)

Ham   Nay   Kehnay   To   Tumhen   Dil   Say   Bhulaaya    Hua   Hay

Bass Yahi Dhaagh Hay , Seenay Men Chhupaaya   Hua   Hay

 Baat Karnay Ko bahut Dair Say Socha  Uss Say

Jiss Ki Tehreer Ko Aankhon Men Basaaya   Hua   Hay

Ab   Giray   Gi   Bhi   To   Kaisay   Keh   Bahut   Sabr   K   Saath

Ham   Nay   Dewaar   Ko   Haathon   Say   Banaaya   Hua   Hay

 Koi Kehta Hay Rafaaqat  Nahen Milnay Waali

Koi Kehta Hay Wo Daihleez Pe Aaya   Hua   Hay

 Wasl Ki Shaam KA Andaaza Bahut Mushkill Tha

Ham Nay Poochha Tha Magar Uss Nay Chhupaaya   Hua   Hay

 

مزید :

شاعری -رومانوی شاعری -غمگین شاعری -